Kisi Meharban Na Aakey Ep No 1 | Urdu Novel

Kisi Meharban Na Aakey Ep No 1 | Urdu Novel


کسی مہربان نے آکےاز قلم ماہ وش چوہدری
قسط نمبر 1


وہ اس وقت اسلام آباد کے پوش ایریے میں موجود نائٹ کلب میں بیٹھا۔۔۔۔۔۔۔وہسکی کے چھوٹے چھوٹے گھونٹ بھرتا ڈانس فلور پر تھڑکتے لڑکے، لڑکیوں کو بے زاری سے دیکھ
رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جو بے ہنگم سے میوزک پر بانہوں میں بانہیں ڈالے اردگرد سے بےخبر ناچتے ہوئے ایک دوسرے میں مگن تھے ۔۔۔
یہ سب کے سب امیروں کی بگڑی ہوئی اولادیں تھیں۔۔۔جو خود کو موڈرن شو کرنے کے چکر میں ہر اچھے برے کی تمیز بھولے بیٹھےتھے۔۔۔۔۔

وہ وہاں اکثر آتا تھا اور صرف شراب سے لطف اندوز ہوتا۔۔۔۔۔وہاں موجود شباب میں اُسےکوئی انٹرسٹ نہ تھا۔۔۔۔
اس لیے اب اس کلب میں آتی جاتی لڑکیاں بھی اس بات سے باخوبی آگاہ ہو چکیں تھیں کہ وہ وہاں صرف چند گھنٹے بیٹھنے، شراب اور سیگرٹ پینے کے ساتھ ساتھ سڑے ہوئے انداز میں سب کو گھورنے آتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شروع شروع میں آنے والی لڑکیوں نے بہت دفعہ اس پر لائنیں مارنے کی کوشش کی۔۔۔۔۔۔۔مگر اُسکے چہرے پر پتھریلے اور بے زاری کے ابھرتے تاثرات نے سب کو اپنے آپ میں سیمٹنے پر مجبور کر دیا۔۔۔
اسی لیے اب وہ وہاں آ کر اپنا چسکا پورا کرتا اور خاموشی سے اٹھ کر چلا جاتا۔۔۔۔۔۔نہ وہ کسی کو بلاتا اور نہ ہی کوئی اُسے۔۔۔۔۔

آج وہ تقریبًا بیس دن کے بعد وہاں آیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک ہاتھ سے سیگرٹ کا کش لے کر دوسرے ہاتھ سے گلاس میں موجود شراب کا گھونٹ بھرتے ہوئے۔۔۔۔۔۔جیسے ہی اُسکی نظر اینٹرنس پر پڑی تو وہاں سے آتی لڑکی کو دیکھ کر حیرت سے ساکت ہو گیا

•••••••••••••••••••••••••••••••••••

ابیہا ہاشم ۔۔۔۔۔۔ریسیپش پر پکارا گیا
ابیہا اپنا نام سن کر آہستگی سے چلتی تھروٹ سرجن ڈاکٹر ربانی کے روم میں داخل ہوئی۔
سِٹ ڈاؤن۔۔۔۔ڈاکٹر ربانی نے ناک پر موجود عینک کے اوپر سے دیکھتے ہوئے کہا
تھینکس۔۔۔۔۔وہ سامنے موجود چئیر پر بیٹھی۔۔۔۔۔۔۔۔
مس ابیہا ہاشم۔۔۔۔۔۔ میں نے آپکی مدر کی رپورٹس دیکھی ہیں اور اُنکی بیماری کا علاج آپریشن ہی ہے۔۔۔۔انہوں نے رُک کر ابیہا کی طرف دیکھا
کوئی اور حل۔۔۔۔۔۔ابیہا نے شکستہ آواز میں پوچھا
نہیں۔۔۔۔۔۔اُنکی بیماری جس اسٹیج پر ہے اسکا آخری آپشن آپریشن ہی ہوتا ہے وہ بھی ایک ڈیڑھ ویک کے اندر ورنہ اگر یہ پوئزن سارے جسم میں پھیل گیا تو ۔۔۔۔۔۔۔
اس تو کے آگے خوفناک خاموشی چھا گئی
کیا چارجز ہونگے آپریشن کے۔۔۔۔۔ابیہا جانتی تو تھی مگر پھر بھی پوچھ لیا
ریسیپشن پر آپ کو انفارم کر دیں گے۔۔۔۔ڈاکٹر ربانی نے بات ختم کی
جی ۔۔۔۔۔۔
ابیہا نے ریسپشن پر آ کر ساری انفارمیشن لی۔۔۔۔۔۔۔۔آپریشن کے چارجز سن کر مایوسی سے شکستہ چال چلتی ہوئی ہوسپٹل سے باہر

•••••••••••••••••••••••••••••••••••

بیا۔۔۔۔۔تم آ گئی کیا کہا ڈاکٹر نے سب ٹھیک
ہے ناں۔۔۔۔۔۔۔۔نیہا نے ایک ہی سانس میں سوال پوچھا۔۔۔۔
پانی۔۔۔۔۔۔ابیہا نے صحن میں موجود تخت پر بیٹھتے ہوئے کہا۔۔
ہاں میں ابھی لائی۔۔۔وہ کچن کیجانب بڑھی
ابیہا نے پاؤں سینڈل کی گرفت سے آزاد کیے اور لمبا سا سانس کھینچ کر خود کو ریلیکس کرنا چاہا
پانی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔نیہا نے گلاس سامنے کیا
ابیہا نے پانی ختم کر کے گلاس واپس پکڑایا
مجھے بتاؤ تو بیا ڈاکٹر نے رپورٹس دیکھ کر کیا کہا۔۔۔۔۔
آپریشن۔۔۔۔۔۔۔۔مختصر جواب آیا
آپ۔۔۔۔۔۔آپریشن۔۔۔۔۔؟؟؟؟؟
ہاں آپریشن۔۔۔۔۔۔۔ابیہا نے مایوسی سے سر ہلاتے تصدیق کی
پھر اب۔۔۔۔۔۔۔نیہا ابھی بھی شاکڈ تھی
اب کیا۔۔۔۔۔۔کچھ تو کریں گے ناں
بیا اتنے پیسے کہاں سے آئیں گے۔۔۔تمہاری جاب تو پہلے ہی چھوٹ گئی ہے۔۔۔۔وہ مالک مکان بھی آیا تھا آج۔۔۔۔وہ پریشان سی بولی
کیا کہہ رہا تھا۔۔۔۔۔؟؟؟
وہی جو پیچھلی دفعہ کہہ کر گیا تھا کرایہ دے دیں یا پھر۔۔۔۔۔۔۔۔وہ رُکی
اچھا تم فکر مت کرو ان شا اللّہ سب ہو جائے گا۔۔۔ابیہا نے خود کو سنبھال کر کہا
مگر کیسے۔۔۔۔؟؟؟
کہا ہے ناں تم فکر نہ کرو اور نہ ہی اپنے چھوٹے سے دماغ پر زور ڈالو ۔۔۔۔۔اس نے بمشکل مسکرا کر ماحول کو ہلکا کرنا چاہا
اچھا بتاؤ کیا پکایا ہے تم نے۔۔۔۔۔
ماش کی دال۔۔۔۔۔۔آہستگی سے بتایا گیا
اچھا ٹھیک ہے تم گرم کرو مجھے بہت بھوک لگی ہے۔۔۔۔۔۔۔میں امّی کو دیکھ لوں پھر کھاتے ہیں مل کر ہونں۔۔۔۔۔۔
ابیہا نے چھوٹی بہن کا افسردہ چہرہ دیکھ کر سر تھپتھپایا اور پریشان سی اندر کمرے کی طرف بڑھ گئی۔۔۔۔

ضرار شاہ نے اینٹرنس سے چادر میں لپٹی لڑکی کو آتے دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔جس نے آدھے سے زیادہ چہرہ پلو سے چُھپا رکھا تھا ۔۔۔۔
وہ حیران تھا۔۔۔۔۔
ایسے حُلیے کی لڑکیاں بھی وہاں اپنی راتیں رنگین کرنے آتیں ہیں
ڈسگسٹنگ۔۔۔۔۔۔۔۔
اسُ نے حیرانگی اور غصے کے ملے جلے تاثرات سے ٹیبل پر مکا مارا

اونہہ۔۔۔۔شکل مومِنا کرتُوت کافراں۔۔۔۔۔وہ ناگواری سے کہتے ہوئے پھر سے کش لینے لگا۔۔۔۔۔۔۔۔۔
••••••••••••••••••••••••••••••••••••

امّی کیسی طبیعت ہے آپکی۔۔۔۔۔ابیہا نے مسکراتے ہوئے ماں سے پوچھا جو تسبیح پڑھ رہیں تھیں۔۔۔
وہ بھی بیٹی کو دیکھ کر مسکرائیں۔۔۔۔۔میں ٹھیک ہوں میری جان۔۔۔
میڈیسن لی آپ نے۔۔۔۔؟؟؟؟
ہاں لے لی۔۔۔۔۔۔اللّہ نے مجھے دو اتنی محبت اور خیال رکھنے والی بیٹیاں جو دی ہیں ۔۔۔۔انہوں نے ابیہا کے زرد سے چہرے کو ہاتھوں کے پیالے میں لے کر بوسہ لیا۔۔
امی آپ سے ایک بات کرنی تھی۔۔۔۔اجازت مانگی
ہاں کرو ۔۔۔۔
امّی وہ ۔۔۔۔آپ رفاقت (مالک مکان )کی بات مان لیں.
یہ کیا کہہ رہی ہو۔۔۔۔۔وہ حیران ہوئیں
ٹھیک ہی تو کہہ رہی ہوں۔۔۔۔ویسے بھی میرے لیے کون سا رشتوں کی لائنیں لگی ہیں جو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رشتوں کی لائنیں نہ سہیں مگر اب اتنے بھی گئے گزرے نہیں کہ ایک پچاس سالہ مرد سے بیاہ دوں گی تمہیں۔۔۔۔۔شاذمہ خفا سی بولیں
مگر امّی۔۔۔۔
اگر مگر چھوڑو۔۔۔۔۔۔جاؤ تھکی ہوئی آئی
ہو کھانا کھاؤ ۔۔۔۔یہ تمہارا سوچنے کا کام نہیں میں خود ہی سنبھال لوں گی۔۔۔۔۔انہوں نے بات ختم کی۔
اچھا آپ بھی آرام کریں میں بھی نماز پڑھ لوں۔۔۔۔
ابیہا آنسو روکتی جلدی سے باہر نکلی۔۔۔۔

میرے مالک میری بیٹیوں کو اپنے حفظُ ایمان میں رکھنا۔۔۔۔۔جلد از جلد مجھے ان کے فرض ادا کرنے کی توفیق دے دے۔۔۔۔میرے مالک۔۔۔۔۔۔۔۔
شازمہ نے اپنی بیٹیوں کے اچھے نصیب کے لیے دل سے دعا کی۔۔۔۔۔۔
•••••••••••••••••••••••••••••••••••••

شازمہ بیگم کی شادی کم عمری میں ہی ہاشم مبین نامی سکول ٹیچر سے ہوئی تھی۔۔۔۔۔
شاذمہ کا تعلق اچھے خاصے معزز گھرانے سے تھا مگر انہوں نے بہت بڑی غلطی کر کے
خود کو اس گھرانے سے الگ کر لیا۔۔۔۔

شاذمہ انیس سال کی تھی جب اُنکے گاؤں کے گورئمنٹ سکول میں میل ٹیچرز کی تقرری ہوئی۔۔۔۔انہی میں ایک ٹیچر ہاشم مبین بھی تھا۔۔۔۔۔۔
شاذمہ نے اس گھبرو کو گاؤں میں دیکھا تو دل ہار بیٹھی۔۔۔۔اور دیکھتے ہی دیکھتے دونوں طرف سے خطوط کا تبادلہ ہونے لگا اور بات شادی تک پہنچ گئی۔۔۔۔
شاذمہ جانتی تھی کہ اس کے خاندان والے اسے کھبی بھی ایک غیر خاندان میں معمولی ٹیچر سے نہیں بیاہیں گے اس لیے اُس نے ہاشم کو راضی کر کے خفیہ نکاح کر لیا۔۔۔
کچھ عرصہ وہ دونوں اس نکاح کو چھپا گئے مگر پھر حویلی میں کچھ مہمان شاذمہ کا رشتہ دیکھنے آئے اور اُس کو پسند کر گئے اور شاذمہ کے لیے نئی مصیبت چھوڑ گئے۔۔۔
ان حالات میں ہاشم نے گھر سے بھاگ جانے کو ہی بہتر جانا مگر شاذمہ اس کے لیے نہ مانی۔۔۔۔وہ جو کر چکی تھی وہ کافی تھا
گھر سے بھاگ کر وہ اپنے باپ بھائیوں کے لیے گالی نہیں بننا چاہتی تھی۔۔۔۔۔۔
یونہی چند دن گزرے جب منگنی کی ڈیٹ فائنل کی گئی۔۔۔
ہاشم مبین کو پتا چلا تو فوًرا سے شاذمہ پر حق جتانے حویلی چلا آیا۔۔۔۔
ہاشم مبین کے منہ سے نکلتے سچے انگاروں کو سب نے سنا مگر پانی سر سے گزر چکا تھا
اس گھر کی اکلوتی بہن، بیٹی تھی وہ ۔۔۔وہ لوگ نہ تو اسے معاف کر سکتے تھے اور نہ ہی سزا دے سکتے تھے۔۔۔۔۔
اس لیے بابا جان نے ایک چھوٹی سی تقریب رکھ کر شاذمہ کو ہاشم مبین کے ساتھ رخصت کر دیا ہمیشہ کے لیے۔۔۔۔اور سزا کے طور پو اُن سے ہر رشتہ ناطہ ختم کر لیا۔۔۔۔۔
وہ دن اور آج کا دن دوبارہ دونوں گھرانوں میں کوئی ملاقات نہ ہوئی۔۔۔۔۔
ہاشم اسے لے کر اسلام آباد آیا جہاں اسکی بوڑھی ماں تھی۔۔۔۔۔کچھ عرصے تو سب ٹھیک رہا جب جمع شدہ سرمایہ ختم ہو گیا اور ہاشم کو کوئی ملازمت نہ ملی تو اس نے شاذمہ کیساتھ بدزبانی شروع کردی۔۔۔
جب پیٹ میں روٹی نہ رہی تو کیسی محبت اور کہاں کی محبت۔۔۔۔بس محبت محبت کا کھیل ختم ہو چکا تھا
شاذمہ اپنے فیصلے پر پچھتا رہی تھی مگر وہ واپسی کا دروازہ خود ہی تو بند کر آئی پھر کیسے جاتی واپس۔۔۔۔۔
ہاشم مبین بھی فارغ رہتا اور سارا سار دن گھر سے باہر رہتا ۔۔۔۔۔جسکا نتیجہ یہ نکلا کہ بری صحبت میں رہ کر وہ ایک شرابی ،جواری بن چکا تھا۔۔۔۔۔
اکثر شازمہ کو مارتا پیٹتا۔۔۔۔۔
شاذمہ یہ سب خاموشی سے سہتیں کوئی آگے پیچھے جو نہ تھا اب۔۔۔۔
حتی کہ ابیہا اور نیہا کی پیدائش پر بھی ہاشم مبین کے رویے میں کوئی فرق نہ آیا
دونوں بہنیں ماں کو پیٹتا دیکھتیں مگر اس
قابل نہ تھیں کہ کچھ کر پاتیں۔
شاذمہ بھی اسی ذلت بھری زندگی کو قبول کر چکی تھی جو اسکی اپنی چوائس تھی۔۔

ابیہا میٹرک میں تھی جب ایک روز ہاشم
مبین کی میت گھر آئی۔۔۔۔۔زہریلی شراب پینے کی وجہ سے اُسکی موت جوئے کے اڈے پر ہو گئی تھی۔۔۔۔وہاں موجود دیگر لوگ ہی لاش گھر پہنچا گئے تھے۔۔۔
ہاشم مبین کی موت سے اُنکی گھریلو لائف
میں کوئی خاص فرق نہ آیا۔۔۔۔۔۔
شازمہ پہلے بھی سلائی کڑھائی کر کے گھر چلاتیں تھیں اور اب بھی۔۔۔۔۔۔مگر
اب ابیہا نے گلی کے بچوں کو ٹیوشن دینا شروع کر دی تھی تاکہ ماں کا ہاتھ بٹا سکے۔۔۔۔۔۔
۔
سال پر لگا کر اڑتے گئے۔۔۔۔
۔
ابیہا نے بی اے آنرز کمپلیٹ کر کے ایک
پرائیوٹ کمپنی میں سیکرٹری کی جاب کر لی۔۔۔۔۔
کیونکہ شازمہ کی بیماری سے ہونے والے
خرچے پر گھر کا گزارا بہت مشکل سے ہو رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔
اس نے چار ماہ ملک انڈسٹریز میں دانیال ملک کی سیکرٹری کی جاب کی
اور دو ہفتے پہلے ہی وہاں سے ریزائن کیا تھا۔۔۔۔۔۔۔
••••••••••••••••••••••••••••••••••

ابیہا اپنے بستر پر لیٹی ماں کے آپریشن اور مکان کے کرایے کے خرچے کو سوچ رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا کروں اب۔۔۔ بھیک بھی مانگوں گی تب
بھی اتنے پیسے اکھٹے نہیں کر پاؤں گی۔۔۔۔۔۔۔
میرے مالک ہم غریبوں کیساتھ ہی ایسا کیوں ہوتا ہے۔۔۔۔۔۔وہ افسردہ ہوئی
کیا مجھے دانیال ملک کی بات مان لینی چاہیے۔۔۔۔۔۔؟؟؟
کوئی اور بھی تو چارہ نہیں ہے اس کے سوا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کون دے گا اتنے پیسے مجھے
ہاں۔۔۔۔۔یہی آخری آپشن ہے
امی نے ساری زندگی اذیت میں گزار دی۔۔۔۔ اب میری باری ہے کہ ان کے لیے کچھ کر سکوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا مجھے ایسا کر کے سکون مل سکے گا۔۔۔۔۔؟؟؟وہ خود سے سوال کر رہی تھی

اب کونسا سکون میں ہوں۔۔۔۔سکون کس بلا کا نام ہے ہم غریبوں کو کیا پتہ جو ایک ایک ٹکے کے لیے ترستے ہیں۔۔وہ مایوس ہوئی
تو پھر میں کال کر لوں اسے۔۔۔۔وہ کشمکش میں تھی
نن۔۔۔۔۔نہیں۔۔۔میں۔۔۔۔۔میں ایسا نہیں کر سکتی۔۔۔میں۔۔۔۔ایسا۔۔۔۔نہیں۔۔۔۔کروں۔۔۔۔گی
یہ آخری سوچ تھی جو ابیہا نے نیند کی وادیوں میں جانے سے پہلی سوچی۔
••••••••••••••••••••••••••••••••••••

بیا۔۔۔۔۔بیا۔۔۔اٹھو۔۔۔۔۔امّی۔۔۔۔امّی کو دیکھو
انہیں پتا نہیں کیا ہو گیا ہے۔۔۔نیہا نے سوئی ہوئی ابیہا کو جنجھوڑا
کک۔۔۔کیا ہوا۔۔۔۔ابیہا ہڑبڑا کر اٹھی
امّی۔۔۔۔۔۔کیا ہوا امّی کو۔۔۔۔ابیہا جلدی سے کھڑی ہوئی
پتا نہیں۔۔۔تم چلو جلدی۔۔۔۔۔۔۔۔نیہا روتے ہوئے بولی
دونوں آگے پیچھے بھاگتیں شازمہ کے کمرے کی طرف گئیں
جہاں وہ جھکی بیٹھی بلڈ ومیٹنگ کر رہیں تھیں
امّی۔۔۔امّی کیا ہوا
شاذمہ ہر گز جواب دینے کی پوزیشن میں نہ تھیں۔۔۔۔۔۔
نیہا تم سنبھالو امّی کو میں رکشہ لاتی ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔ابیہا کہتی باہر بھاگی
چند منٹ بعد وہ اور نیہا ماں کو سنبھالتیں ہوسپٹل جا رہیں تھیں
•••••••••••••••••••••••••••••••••••••

چادر میں لپٹی لڑکی ضرار کو اپنی طرف بڑھتی محسوس ہوئی۔۔۔۔۔۔۔
اس نے ایک نظر پھر سے اُسے دیکھا۔۔۔۔۔ وہ واقعی آہستہ آہستہ چلتی اُس کی ہی
طرف آ رہی تھی۔۔۔۔۔۔
•••••••••••••••••••••••••••••••••••

میں آپ کو انفارم کر چکا تھا۔۔۔۔۔۔مس ابیہا ہاشم جتنی جلدی ہو سکے اپنی مدر کو
آپریٹ کروائیں ورنہ۔۔۔۔
جج۔۔۔جی۔۔۔۔میں کرتی ہوں کچھ
اوکے ۔۔۔ریسیپشن پر پیپرز سائن کریں اور چارجز سبمٹ کروا کر آپریشن کی ڈیٹ لیں۔
جی۔۔۔۔ابیہا نے آہستگی سے جی کہا
ہونں ۔۔۔۔ڈاکٹر ربانی سر ہلاتے چلے گئے
ابیہا ریسیپشن پر آئی۔۔۔
ساری ڈیٹیل لے کر وہاں موجود لڑکی کو دیکھا۔۔۔۔۔۔۔
وہ۔۔۔۔۔وہ کوئی ڈسکاؤنٹ مل سکتا ہے۔۔۔وہ ہچکچاتی ہوئی بولی
میڈم۔۔۔۔۔۔۔یہ پرائیوٹ ہوسپٹل ہے نہ تو کوئی خیراتی ادارہ اور نہ ہی کوئی سیل میلا جہاں ڈسکاونٹ ملے۔۔۔۔
آپ کو پیپرز سائن کرنے ہیں تو کریں ادروائز میرا ٹائم ویسٹ مت کریں۔۔۔۔۔وہ کھرا سا جواب دیتی پھر سے کمپیوٹر پر بزی ہو گئی
ابیہا اس ٹکے سے جواب کو سن کر فائنل
فیصلہ کر کے مضبوط قدم اٹھاتی۔۔۔
نیہا اور شازمہ بیگم کو واپس گھر لانے کے
لیے چل دی۔۔۔۔۔۔
••••••••••••••••••••••••••••••

سیمل۔۔۔۔سیمل بیٹا۔۔۔کہاں ہو
وہ کیچن میں تھی جب فرح بیگم کی آواز سنائی دی
جی امی۔۔۔۔کیچن میں ہوں
یہ چھوڑو سب اور جا کر حلیہ ٹھیک کرو۔۔۔تھوڑا تیار ہو جاؤ جا کر۔۔۔۔۔۔رفعت (رشتہ کروانے والی) کا فون آیا ہے وہ کسی فیملی کو لے کر آ رہی ہے ۔۔۔۔فرح بیگم نے تیار ہونے کی وجہ بتائی
امی میں نہیں جاؤں گی کسی کے سامنے ۔۔۔وہ اکتائی
فضول مت بولو۔۔۔۔چلو جاؤ شاباش۔۔۔اپنی بھابھیوں کا پتا ہے ناں تمہیں۔۔۔۔میرے ہوتے ہوئے تمہیں برداشت نہیں کرتیں۔۔۔۔۔ جب میں نہ رہی تب ناجانے کیا کریں گی تمہارے ساتھ۔۔۔اس لیے تنگ مت کیا کرو جاؤ۔۔۔
چھوڑو یہ۔۔۔۔۔فرح بیگم نے اُس کے ہاتھ سے
باؤل پکڑا۔۔۔
جا رہی ہوں۔۔۔۔۔صرف آپ کی خاطر۔۔۔۔
جاؤ میرا بچہ۔۔۔۔۔۔انہوں نے چھوٹے بچوں کے انداز میں پچکارا
سیمل۔۔۔۔منہ بناتی کمرے میں تیار ہونے چل دی۔۔۔۔۔۔۔
••••••••••••••••••••••••••••••

بیا تم امی کو کیوں لے آئی ہو واپس اگر پھر سے طبیعت بگڑ گئی تو۔۔۔۔۔۔نیہا نے پریشانی سے پوچھا
ایک ،دو دن تک پیسوں کا انتظام کر کے
پھر ہی ایڈمٹ کروائیں گے۔۔۔۔اتنا بل کہاں سے دیتے ابھی ایڈمٹ کروا کر۔۔۔ابیہا نے واپس لانے کی وجہ بتائی۔۔
کہاں سے ہو گا اتنے پیسوں کا انتظام۔۔؟؟؟؟؟ ابھی تو کرایہ بھی دینا ہے دو ماہ کا۔۔۔وہ رو دینے کو تھی
ہو جائے گا تم فکر مت کرو اور امّی کے پاس جاؤ۔۔۔۔۔۔۔۔ابیہا سنجیدگی سے کہتی سیڑھیاں چڑھ گئی
••••••••••••••••••••••••••••••
ہیلو۔۔۔۔۔ سر۔۔۔۔اسلام و علیکم
مم۔۔۔۔میں۔۔۔میں ابیہا ہاشم ۔۔۔۔وہ ہچکچائی

اوہ ہ ہ ہ۔۔۔۔۔ابیہا ہاشم۔۔۔۔۔۔۔کہیے کیسے یاد کیا
دوسری طرف تمسخرانہ انداز میں پوچھا گیا
سر۔۔۔۔۔۔وہ۔۔۔۔۔وہ۔۔۔۔ابیہا نے سوکھتے ہونٹوں
پر زبان پھیری
جی۔۔۔جی۔۔۔۔ ضرور کہیے میں سن رہا ہوں۔۔۔وہ محظوظ ہوا
سر وہ میں آپ سے ملنا چاہتی ہوں۔۔۔ابیہا نے جلدی سے بات مکمل کر کے دل پر ہاتھ رکھا جسکی دھڑکن بے قابو ہو رہی تھی

ہاہاہاہاہا ۔۔۔۔۔دوسری طرف بے ہنگم سا قہقہ
لگایا گیا
اتنی۔۔۔۔۔اتنی جلدی۔۔۔۔۔۔اُس نے ہنسی کے دوران پوچھا
سر کیا آپ مل سکتے ہیں ۔۔۔۔ابیہا نے غصہ دباتے ہوئے پوچھا
ضرور۔۔۔۔ضرور۔۔۔۔ہاہاہاہاہا
تو پھر میں کل آفس آ جاؤں گی۔۔۔
نو۔۔۔۔نو۔۔۔۔مس ابیہا آفس میں نہیں۔۔۔۔
کیوں۔۔۔۔۔؟؟؟
ایسی ملاقاتیں آفسز میں نہیں ہوتیں۔۔۔۔وہ ہنسا
تو پھر۔۔۔۔۔؟؟؟؟وہ حیران ہوئی
پھر یہ کہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ابیہا دانیال ملک کے منہ سے جگہ کا نام
سن کر ساکت ہو گئی۔۔
•••••••••••••••••

0/Post a Comment/Comments

Please Do Not Enter Any Spam Link In THe Comment box.

Previous Post Next Post