Kisi Meharban Na Aakey Ep No 12 | Urdu Novels

Kisi Meharban Na Aakey Ep No 12 | Urdu Novels


کسی مہربان نے آکےاز قلم ماہ وش چوہدری
قسط نمبر 12


ابیہا نے سوچ لیا تھا کہ ضرار کو کیسے ہینڈل کرنا ہے۔۔۔۔۔
مگر فلوقت وہ اپنے زخمی پاؤں کیوجہ سے کچھ نہیں کر سکتی تھی۔۔۔
اگلے روز بھی ڈاکٹر شاکر آ کر نئی بینڈیج کر گئے تھے۔۔۔
دو دن ہو گئے تھے۔۔۔۔۔مگر ضرار نے کوئی بات نہ کی تھی۔۔۔۔اور نہ اسکے پاؤں کا پوچھا
تیسرے روز تنگ آ کر ابیہا نے خود ہی اُسے مخاطب کر لیا
وہ آفس جانے کو تیار ہو رہا تھا

ضرار آپ خفا ہیں مجھ سے۔۔۔۔۔۔؟؟
ضرار خاموشی سے اپنا کام کرتا رہا
میں نے ایسا تو کچھ نہیں کہا تھا جو آپ لڑکیوں کی طرح منہ پُھلائے ہوئے ہیں۔۔۔
اسکی بات پر ضرار نے آئینے میں نظر آتے اسکے عکس کو تگڑی گھوری دی
ابیہا مسکرا دی۔۔۔۔۔گھور کیوں رہے ہیں۔۔۔۔ہمت ہے تو آنکھوں کی بجائے زبان سے کام لیں
تمہاری زبان جو ہے چلنے کے لیے۔۔۔۔وہ چڑ کر بولا
ہاں۔۔۔۔میں زیادہ ہی بولتی ہوں۔۔۔۔اور آپکو پتہ ہے مجھے زیادہ بولنے والے لوگ ہی پسند ہیں
میں نے تم سے تمہاری پسند نہیں پوچھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔چٹخ کر جواب آیا
مگر میں نے بتا دی ہے۔۔۔۔غور سے سن لیں۔۔۔اور ہاں میں نے کل اماں جان کو فون پر اپنے پاؤں کے زخمی ہونے کا بتایا تھا۔۔۔۔
پوچھ رہیں تھیں کہ کیسے زخمی ہوا تو میں نے کہا کہ آپ کی وجہ سے۔۔۔۔اس لیے آج وہ آ رہی ہیں۔۔۔۔۔ابیہا نے معصومیت سے کہا

تم نے اُن سے کہا کہ میں نے زخمی کیا ہے تمہارا پاؤں۔۔۔۔۔وہ اسکی طرف آیا
آپ نے نہیں۔۔۔۔۔ آپ کی وجہ سے۔۔۔۔۔
بات تو ایک ہی ہے۔۔۔۔تم میری سوچ سے زیادہ کلیور ہو ابیہا ہاشم۔۔۔۔ضرار نے دانت کچکچائے
ابیہا ہاشم نہیں۔۔۔۔ابیہا ضرار شاہ۔۔۔۔۔اس نے تصیح کی
دیکھ لوں گا تمہیں ابیہا ضرار شاہ۔۔۔۔ضرار دھمکی دیتا کمرے سے نکل گیا
کب دیکھیں گے مجھے۔۔۔۔۔ابیہا شرمانے کی ایکٹینگ کرتی قہقہ لگا کر ہنس دی۔۔۔
……………………………………….…............

ضرار جب آفس سے آیا تو اماں جان۔۔۔۔عالمگیر شاہ اور مسز عالمگیر شاہ آئے ہوئے تھے
وہ سب سے مل کر فریش ہونے کا کہتا اٹھا ہی تھا۔۔۔۔۔جب ابیہا بھی کھڑی ہوئی ۔۔۔۔اماں جان میں ذرا ان کے کپڑے وغیرہ نکال آؤں۔۔۔۔۔۔۔وہ سگھڑ بیویوں کے انداز میں کہتی آگے بڑھی۔۔۔۔
ضرار اسے ہی گھور رہا تھا۔۔۔۔۔۔
تم کیوں کھڑے ہو جاؤ فریش ہو آؤ۔۔۔پھر کھانا کھاتے ہیں تمہاری بیوی نے تو ہمیں بھی بھوک ہڑتال کرا رکھی ہے تمہارا انتظار کر رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔مسز عالمگیر نے مسکرا کر کہا
جی۔۔۔۔ضرار جلدی آئیں پھر کھانا بھی لگوانا ہے میں نے۔۔۔۔۔وہ ایسے بولی جیسے پہلے بھی وہ ہی یہ سب کرتی ہو
چلئیے۔۔۔۔۔۔۔۔ضرار دانت پیس کر کہتا اُسکے پیچھے پیچھے روم میں آیا
ایکٹنگ اچھی کر لیتی ہو۔۔۔۔۔اس نے کوٹ اتارتے کہا
شکریہ۔۔۔۔۔وہ مسکرا کر بیڈ پر بیٹھی
بیٹھ کیوں گئی۔۔۔۔تم تو یہاں میرے کپڑے نکالنے آئی تھی ناں۔۔۔۔۔
لو وہ تو میں نے اماں جان کی وجہ سے کہا تھا ۔۔۔۔آپ کے آنے سے پہلے شوہر کی خدمت پر ایک لمبا لیکچر دے چکیں تھیں مجھے۔۔۔۔۔۔تو میں نے سوچا امپریس ہی کر دوں
اب ذرا جلدی کریں پھر مجھے کیچن بھی دیکھنا ہے۔۔۔۔
ہاں پہلے تو تم ہی دیکھتی ہو کیچن۔۔۔۔ضرار نے طنزیہ کہا
پہلے نہیں دیکھتی تھی مگر جب تک اماں جان ہیں میں ہی دیکھوں گی۔۔۔۔وہ مسکرا کر کہتی ضرار کو آگ لگا گئی
اونہہ۔۔۔۔وہ سر جھٹکتا واش روم میں گھس گیا۔۔
……………………………………………………………

اگلے روز وہ سب نیہا کے گھر گئے
اماں جان نے ضرار کو بھی جانے کا کہا تھا مگر اس نے کام کا بہانا کر کے منع کر دیا
نیہا ان سب کو دیکھ کر بہت خوش ہوئی اور اب انکی آؤ بھگت کے لیے کیچن میں تھی جب ابیہا بھی کیچن میں آئی

کیا کر رہی ہو۔۔۔۔لاؤ میں کر دیتی ہوں
ارے نہیں بیا میں کر لوں گی۔۔۔۔تم وہاں چئیر پر بیٹھو اور مجھے ضرار بھائی کے بارے میں بتاؤ۔۔۔۔اس روز بھی تم مجھ سے ہی ساری باتیں پوچھ گئی اور اپنا کچھ بھی نہیں بتایا۔۔۔
کیا بتاؤں۔۔۔۔۔؟؟؟
یہی کہ ضرار بھائی کیسے ہیں تمہارے ساتھ ۔۔۔۔خیال رکھتے ہیں تمہارا۔۔۔۔؟؟؟؟
تمہارے ضرار بھائی ایک نمبر کے نک چڑے اور کلف لگے انسان ہیں۔۔۔۔ابیہا نے کیلا کھاتے ہوئے بتایا
مطلب۔۔۔۔۔؟؟؟
مطلب وطلب چھوڑو۔۔۔۔۔تم اب ریسٹ کیا کرو جو ملازمہ آتی ہے اسے پورے دن کے لیے رکھ لو
میری فکر مت کرو۔۔۔۔یہاں بہت سے لوگ موجود ہیں میرا خیال رکھنے والے ۔۔۔۔تم اپنی بتاؤ مجھے۔۔۔
ضرار بھائی کا رویہ ٹھیک نہیں کیا تمہارے ساتھ۔۔۔۔۔۔وہ بیا کی بات پر فکر مند ہوئی
ارے نہیں یار۔۔۔۔ایسی بات نہیں۔۔۔۔
تو پھر کیسی بات ہے۔۔۔۔نیہا کام چھوڑ کر اسکے سامنے آئی
مائی سویٹ سس پریشانی کی بات نہیں ہے۔۔۔۔میں بہت خوش ہوں۔۔۔۔اور خوش ہونا بھی چاہیئے بیٹھے بیٹھائے اتنا امیر شوہر جو مل گیا۔۔۔۔۔وہ ہنسی
تم نے دیکھا نہیں تھا کہ کیسے ہم لوگ چند پیسوں کے لیے ترستے تھے۔۔۔۔اور اب اتنے ہیں کہ۔۔۔۔۔کاش امی بھی ہوتیں تو ہمیں یوں اپنے گھروں میں خوش دیکھ کر کتنا پرسکون ہوتیں۔۔۔۔وہ افسردگی سے بولی
ہاں میں بھی اکثر سوچتی ہوں کہ کاش امی زندہ ہوتیں۔۔۔۔نیہا روہانسی ہوئی
اچھا بس اب رونے مت لگ جانا۔۔۔۔۔میں تمہیں مزے کی بات بتاتی ہوں۔۔۔۔ابیہا نے ماحول ہلکا کرنا چاہا
ہاں بتاؤ۔۔۔۔۔؟؟؟
تمہیں پتا ہے ضرار شاہ کون ہے۔۔۔۔؟؟؟اس نے سسپینس کری ایٹ کیا
ہمارے کزن اور تمہارے ہزبینڈ۔۔۔۔نیہا نے معصومیت سے کہا
اسکے علاوہ۔۔۔۔۔۔
بتاؤ بیا فضول میں سسپینس مت
پھیلاؤ۔۔۔۔نیہا چڑی
اوکے۔۔۔۔۔سنبھل کے۔۔۔۔۔ضرار شاہ وہی نامعلوم ہے جس کی ہمیں تلاش تھی
تمہارا مطلب وہ۔۔۔۔۔وہ پیسے۔۔۔۔ضرار بھائی۔۔۔۔
یس۔۔۔۔۔ابیہا مسکرائی
اوہ مائی گاڈ۔۔۔بیا تم۔۔۔۔تم نے پہلے کیوں نہیں بتایا مجھے۔۔۔۔۔وہ شاکڈ سی بولی
یاد نہیں رہا۔۔۔۔۔۔۔
اتنی بڑی بات یاد نہیں رہی۔۔۔۔۔اوف یار۔۔۔۔سچ میں خون کے رشتوں میں کشش ہوتی ہے میں مان گئی بھئی۔۔۔۔نیہا خوش ہوئی
بہت کشش ہوتی ہے۔۔۔۔اتنی کشش کہ دیکھو وہ پورے کا پورا مجھ سے ساری زندگی کے لیے چمٹ گیا ہے۔۔۔۔ابیہا نے آنکھ ماری
بہت بدتمیز ہو تم۔۔۔۔۔وہ مسکرائی
اچھا چھوڑو یہ بتاؤ بنا کیا رہی ہو ہمارے لیے۔۔۔۔؟؟؟؟
قیمہ بنا رہی ہوں۔۔۔۔تمہیں پسند ہے ناں۔۔۔وہ مسکرائی
نیہا تم میری دوسری ماں ہو سچی۔۔۔۔۔پہلے بھی تم میرے کھانے پینے کا کتنا خیال کرتی تھیں۔۔۔۔ابیہا نے پیچھے سے اُسے جھپی ڈالی

اچھا بس مکھن مت لگاؤ۔۔۔وہ تو تم کام چور تھی اس لیے مجھے ہی سب کرنا پڑتا تھا۔۔۔۔
بلکل۔۔۔۔ابیہا نے مسکرا کر اسکے گال کی پپی لی۔۔۔۔
آآہہہہہہم۔۔۔۔۔اسد نے گلا کھنکارا
ابیہا جھٹکا کھا کر پیچھے ہوئےہوئی
اسلام وعلیکم۔۔۔۔اسد بھائی
واعلیکم سلام۔۔۔۔۔کیسی ہیں۔۔۔۔۔؟؟
میں ٹھیک آپ سنائیں۔۔۔۔وہ مسکرائی
ہم بھی فٹ آخر آپ نے اپنی اتنی کئیرنگ سسٹر ہمیں جو سونپ دی۔۔۔۔۔اسد نے مسکرا کر نیہا کی طرف دیکھا
ویل سیڈ۔۔۔۔آپ واقعی لکی ہیں اس معاملے میں۔۔۔۔۔میری بہن واقعی بہت کئیرنگ اور لونگ ہے۔۔۔۔۔اس کا ڈھیر سارا خیال رکھا کریں۔۔۔۔ابیہا نے بھی مسکرا کر کہا
آپ کے سامنے موجود ہیں پوچھ لیں خیال رکھتا ہوں یا نہیں۔۔۔۔کیوں نیہا۔۔۔۔وہ شوخی سے کہتا نیہا کی طرف بڑھا
ارے بھئی کتنی دیر ہے کھانے میں۔۔۔۔۔نیہا کی ساس کیچن میں آئیں
بس امی ریڈی ہے سب میں کھانا لگاتی
ہوں۔۔۔۔
میں ہیلپ کر دوں گی آنٹی آپ جائیں۔۔۔۔۔ابیہا نے انہیں پلٹس اٹھاتے دیکھ کر کہا
ہونں۔۔۔۔خوش رہو۔۔۔۔وہ مسکرا کر دعا دیتیں چلیں گئیں۔۔۔۔۔۔
…………………………………………………………

وہ لوگ کھانا کھا کر رات دس بجے کے قریب واپس گھر آئے
ابیہا ضرار آ گیا کیا۔۔۔۔۔اماں جان نے لیٹتے ہوئے پوچھا
آ گئے ہوں گے اب تو دس بج چکے ہیں۔۔۔۔میں دیکھتی ہوں
ہونں۔۔۔۔۔تم اپنا بھی خیال رکھا کرو میری بچی۔۔۔۔۔اماں جان مسکرا کر بولیں
رکھتی ہوں اماں جان۔۔۔بلکہ بہت زیادہ رکھتی ہوں۔۔۔۔دیکھ نہیں رہیں موٹی ہوتی جا رہی ہوں
ارے کہاں موٹی ہو رہی ہو بلکل ٹھیک
ہو۔۔۔۔۔۔۔۔اب بلاوجہ کی ڈاٹنگ مت شروع کر دینا
ڈاٹنگ نہیں اماں جان ڈائٹنگ۔۔۔۔۔۔ابیہا نے مسکرا کر کہا
جو بھی ہے وہی۔۔۔۔۔
اچھا آپ آرام کریں میں جا کر دیکھتی ہوں۔۔۔۔وہ اماں جان کو کمبل اوڑھاتی کمرے سے نکل گئی
……………………………………………………………

کھانا کھا لیا آپ نے۔۔۔؟؟؟۔۔۔ابیہا نے ضرار سے پوچھا جو لیب ٹاپ سامنے رکھے بیڈ پر بیٹھا تھا
بلاوجہ بیوی مت بنا کرو۔۔۔روکھا سا جواب آیا
بیوی ہوں تو بیوی ہی بنوں گی۔۔۔۔
مجھے کام کرنے دو۔۔۔۔جاؤ سو جاؤ۔۔۔وہ چڑا
آپ پہلے تو ایسے بات نہیں کرتے تھے۔۔۔۔
میں پہلے تم سے بات ہی کب کرتا تھا۔۔۔ضرار نے گھورا
اب ایسی بھی بات نہیں۔۔۔۔یہ۔۔۔یہ لڑکیاں دیکھ رہے ہیں آپ۔۔۔۔ابیہا سکرین پر لڑکی کی تصویر دیکھ کر اچھلی
ضرار اپنی نیکسٹ کلیکش کے لیے ماڈل سلیکٹ کر رہا تھا
تو۔۔۔۔تمہیں کیا مسلہ ہے۔۔۔؟؟؟
میں بیوی ہوں آپ کی اور میرے سامنے آپ دوسری لڑکیوں کو اتنے غور سے دیکھیں گے تو مجھے مسلہ ہو گا ہی ۔۔۔۔۔
اچھا بس۔۔۔۔اب سو جاؤ کافی رات ہو گئی ہے
تاکہ آپ ان چڑیلوں کو گھور سکیں۔۔۔۔؟؟
اپنے نیکسٹ برانڈ کے لیے ماڈل سلیکٹ کر رہا ہوں۔۔۔۔وہ چڑ کر بولا
اوہ اچھا۔۔۔۔پہلے بتا دیتے ۔۔۔۔۔لائیں میں بتاتی ہوں۔۔۔۔کون سی اچھی ہے۔۔۔۔۔ابیہا نے بیڈ پر چوکڑی ماری اور لیب ٹاپ اپنی طرف کیا

ضرار نے اس ضدی لڑکی کو دیکھا جو ہر کام میں خودی گھسی جا رہی تھی
ایسے کیا دیکھ رہیں ہیں۔۔۔۔کہیں میں تو ایز آ ماڈل پسند نہیں آ گئی
شٹ اپ ابیہا۔۔۔۔۔سوچ سمجھ کر بولا کرو
آپ بھی سوچ سمجھ کر ڈانٹا کریں۔۔۔۔آپ کو یاد ہے میں یہاں کچھ شرائط پر رُکی تھی اور آپ نے اُن میں سے کوئی بھی شرط پوری نہیں کی۔۔۔اس لیے سوچ رہی ہوں کہ اب ہی اماں جان کیساتھ واپس چلی جاؤں۔۔۔۔۔۔
اور جو تم اچھی بیوی کی ایکٹنگ کر رہی تھی اُس کا کیا۔۔۔۔۔؟؟؟
وہ ضرار کی بات پر لاجواب ہوئی
یہ والی کیسی رہے گی۔۔۔۔ابیہا نے ایک اسٹائلش سی لڑکی پر انگلی رکھی
ہونں اچھی ہے۔۔۔۔۔
تو پھر یہی ٹھیک ہے۔۔۔۔آپ اسے ہی ہائر کر لیں
کر لوں گا۔۔۔۔ضرار لیب ٹاپ اٹھاتا کھڑا ہوا
کہاں۔۔۔۔۔؟؟؟
اسٹڈی میں۔۔۔۔۔تمہارے ہوتے ہوئے میں سکون سے کام کر سکتا ہوں بھلا۔۔۔۔
تو میں وہاں بھی سکون سے بیٹھنے نہیں دوں گی۔۔۔۔ابیہا نے دھمکی دی
ڈونٹ بی سِلی۔۔۔۔۔۔
اچھا کھانے کا تو بتا دیں۔۔۔۔اماں جان نے کہا تھا پوچھنے کو
کھا لیا ہے کھانا۔۔۔۔۔۔۔وہ پھاڑ کھاتا چلا گیا
بہت ہی بدتمیز ہیں آپ تو۔۔۔۔۔۔ابیہا نے ناک سے مکھی اُڑائی
……………………………………………………………

اماں جان مزید دو دن رہ کر واپس چلیں گئیں تھیں
ابیہا کا پاؤں بھی ٹھیک ہو گیا تھا
ابیہا نے نامحسوس انداز میں ضرار کے سارے کام اپنے ہاتھ میں لے لیے تھے۔۔۔۔۔
وہ آفس جانے کے لیے تیار ہوتا تو ساری چیزیں ریڈی ملتیں۔۔۔۔۔
وہ واپس آتا تو بھی ابیہا چائے لیے حاضر ہوتی۔۔۔۔اُسکے کپڑے نکالتی اور اسکی باقی چیزیں انکی جگہوں پر واپس رکھتی۔۔۔۔ضرار کے لیے یہ سب نیا تھا۔۔۔۔۔گرینی کے بعد تو وہ اس سب کے لیے ترس گیا تھا۔۔۔۔کہ کوئی ہو جو اسے اور اسکی ضروتوں کو سمجھے۔۔۔۔مگر شادی کے نام سے چڑ جاتا تھا۔۔۔۔
ابیہا کا خیال رکھنا ضرار کو اچھا لگ رہا تھا۔۔۔۔اسلیے اُس نے بھی طنز کے تیر پھینکنے بند کر دیے تھے۔۔۔۔
ابیہا اپنے پلان کے مطابق اُسے اپنا عادی بنانے میں کامیاب ہو رہی تھی۔۔۔۔مگر در حقیقت وہ خود بھی اسکی عادی بنتی جا رہی تھی
کافی دن یوں ہی خاموشی سے ایک دوسرے کی موجودگی کو فیل کرتے گزر گئے۔۔۔۔

جب ایک دن ابیہا نے ضرار سے اسٹڈی میں موجود کبڈ کی چابی مانگی
تم کیا کرو گی اُس کا۔۔۔۔وہ حیران ہوا
جو بھی کروں گی دیکھ لیجئیے گا۔۔۔۔اس لیے کیز دیں
وہاں ڈرارڑ میں ہیں۔۔۔۔۔ضرار جانتا تھا وہ اپنی منوا کر ہی دم لے گی
ابیہا نے وہاں سے کیز لے کر کبڈ کھولی۔۔۔
اُسکی توقع کے مطابق وہاں برانڈڈ وائن کی کئی بوٹلز موجود تھیں
ابیہا نے سب کو باری باری ساتھ لائی باسکٹ میں رکھا۔۔۔۔۔
ضرار کچھ فاصلے پر کھڑا یہ سب ہوتے دیکھ رہا تھا
ابیہا نے وہ باسکٹ اٹھانی چاہی مگر باسکٹ ہیوی تھی
اسے اُٹھائیں پلیز۔۔۔۔اس نے ضرار کو اشارہ کیا
کہاں لے کر جانا ہے یہ سب۔۔۔۔؟؟؟
واش روم میں۔۔۔۔
واٹ۔۔۔۔؟؟واش روم۔۔۔۔ابیہا بی بی۔۔۔۔۔یہ واش روم صاف کرنے کا تیزاب نہیں ہے۔۔۔۔وہ طنزیہ بولا
میں جانتی ہوں ۔۔۔یہ آپ کی مرغوب غذا
ہے۔۔۔۔وہ بھی طنزیہ ہوئی
پھر کیا کرو گی اس کا۔۔۔؟؟
لے کر تو جائیں۔۔۔۔۔پھر بتاتی ہوں
ضرار وہ باسکٹ اٹھا کر واش روم لے گیا۔۔۔۔
پیچھے ہی ابیہا وہاں آئی
ہٹیں۔۔۔۔۔وہ پیچھے ہٹا
ابیہا نے دوپٹہ گلے سے اُتار کر ناک پر باندھا
ضرار حیران ہوا۔۔۔
اب اُس نے وائن کی بوتل اٹھائی اور ڈھکن کھول کر اُسے فلش میں الٹا دیا
اوہ ہ۔۔۔ابیہا یہ۔۔۔۔یہ کیا کر رہی ہو
ضرار نے بوتل اسکے ہاتھ سے چیھنی
کیا مسلہ ہے۔۔۔۔۔وہ چیخی
مسلہ مجھے نہیں۔۔۔تمہیں ہے جانتی ہو ان کی پرائس سب برینڈڈ ہیں۔۔۔
بھاڑ میں گئی پرائس اور برینڈ۔۔۔ہٹیں پیچھے اور چھوڑیں اسے ورنہ میں آپ کو نہیں چھوڑوں گی۔۔۔۔ابیہا نے دھمکی دی
مت چھوڑنا مجھے ۔۔۔مگر یہ سب
میں یہ سب کروں گی ضرار شاہ اور آپ کے سامنے ہی کروں گی۔۔۔۔
دیکھتی ہوں کون روکتا ہے مجھے۔۔۔ابیہا نے دوسری بوتل اٹھائی
بیا لِسن۔۔۔۔۔
آپ نے وعدہ کیا تھا کہ نہیں پئیں گے
پھر ۔۔۔پھر آپ کو کیوں درد اٹھ رہا ہے جب پینی نہیں ہے تو پھینکنے دیں
مگر۔۔۔۔۔
کوئی اگر مگر نہیں۔۔۔پلیز ضرار۔۔۔۔۔
فائن جو جی میں آئے کرو ضرار بوتل اچھالتا دروازے کیطرف بڑھا
یہ کانچ کون اُٹھائے گا جو پھیلایا ہے ۔۔۔۔۔وہ چیختی رہ گئی۔۔۔
ضرار سنی ان سُنی کرتا باہر نکل گیا
……………………………………………………………

ضرار واش روم سے نہیں گھر سے ہی نکل گیا تھا اور اب اسے گئے چار گھنٹے ہو چکے تھے
سیل بھی آف تھا
عجیب شخص ہے یہ۔۔۔۔میری سمجھ سے باہر۔۔۔۔دل چاہے تو بڑی سے بڑی بات پر ری ایکٹ نہیں کرتا اور دل چاہے تو بلاوجہ ہی غصہ۔۔۔۔۔اونہہ
کہاں ہیں ضرار۔۔۔۔ابیہا ٹیرس پر ٹہلتی اسکا انتظار کر رہی تھی
اب تو ٹانگیں بھی جواب دے گئیں تھیں۔۔۔۔وہ چئیر پر بیٹھی ہی تھی جب ضرار کی گاڑی کا ہارن بجا
اوہ شکر ہے اللّہ۔۔۔۔۔ابیہا نے سانس بحال کی
کہاں تھے آپ۔۔۔؟؟؟۔۔اس نے ضرار کو سیڑھیوں کے پاس گھیر لیا
جہاں بھی تھا تم سے مطلب ۔۔۔۔۔ضرار نے بھنویں اچکائی
مطلب ہے تو پوچھ رہی ہوں۔۔۔۔
مگر مجھے تمہارے مطلب میں کوئی انٹرسٹ نہیں۔۔۔۔وہ اسے سامنے سے ہٹاتا کمرے میں چلا گیا
کھانا کھایا ہے آپ نے۔۔۔۔اس نے بھی پیچھے آ کر پوچھا
آپ سے پوچھ رہی ہوں ضرار۔۔۔۔۔وہ اونچی آواز میں بولی
ضرار جیکٹ اتارتا واش روم گھس گیا
بیس منٹ بعد وہ نہا کر بال رگڑتا باہر نکلا
کھانا کھا کر آئے ہیں کیا۔۔۔۔؟؟؟۔۔۔وہ پھر سے پاس آئی
واٹس یور پرابلم۔۔۔۔۔کیوں سر پے سوار ہو جاتی ہو۔۔۔۔۔جب میں آنس نہیں کر رہا تو مطلب میں تم سے بات نہیں کرنا چاہتا۔۔۔اتنی سی بات سمجھ میں نہیں آتی تمہارے۔۔۔۔۔۔۔وہ غصے میں آوٹ ہوتا چلایا
نہیں۔۔۔۔نہیں کروں گی اب کوئی بات۔۔۔۔ابیہا کیساتھ ضرار نے دوسری دفعہ ایسا ری ایکٹ کیا تھا ایک پہلی رات جب اس نے غصے میں آوٹ ہو کر اسکے بال جکڑے تھے۔۔۔۔اور ایک اب وہ یوں چلایا تھا جیسے ابھی اسکا گلا دبا دے گا۔۔
ابیہا روتی ہوئی کمرے سے نکل گئی
شٹِ۔۔۔۔۔ضرار نے ڈریسنگ ٹیبل پر مکا مارا
وہ اُسے روتے دیکھ چکا تھا
………………………………………………………………

ابیہا نے بول چال کیساتھ ہی ضرار کے باقی کاموں کا بھی بائیکاٹ کر دیا تھا
دو دن ہو گئے تھے جھگڑا ہوئے۔۔۔۔
ضرار کافی اپ سیٹ تھا
مجھے سوری کر لینا چاہیے۔۔۔۔۔میری وجہ سے ہی خفا ہے
پتا نہیں اچانک سے مجھے کیا ہو جاتا ہے ۔۔۔۔میں کیوں اتنا مس بی ہیو کر جاتا ہوں۔۔۔۔۔۔وہ اس وقت نائٹ کلب میں بیٹھا سیگرٹ پھونک رہا تھا
صرف سیگرٹ۔۔۔۔۔شراب ابیہا سے وعدے کے بعد سے نہیں پی تھی اُس نے
مجھے ابیہا کیساتھ ایسا نہیں کرنا چاہیے۔۔۔۔اس نے مجھے میری تمام ویکنیسز سمیت قبول کیا ہے ۔۔۔وہ جانتی تھی میں میریڈ تھا۔۔۔۔پھر بھی اُس نے اس بات کا کبھی کوئی طنعہ نہیں دیا مجھے۔۔۔۔بلکہ وہ تو میرا بہت خیال کرتی ہے۔۔۔۔میری ہر ضرورت بنا کہے ہی سمجھ لیتی ہے۔۔۔۔۔بیوی اسے ہی تو کہتے ہیں۔۔۔مجھے اور کیا چاہئیے۔۔۔۔۔اتنی اچھی صورت اور سیرت کی لڑکی مجھے عطا کر دی گئی ہے۔۔۔۔ دیر سے سہی پر اُس پاک ذات نے مجھے مایوس نہیں کیا۔۔۔۔مجھے اکیلا نہیں کیا۔۔۔۔میں پھر کیوں ناشکری کر رہا ہوں۔۔۔۔
میں اُسے اُس کریکٹرلیس سیمل کی سزا کیوں دے رہا ہوں۔۔۔۔۔۔مجھے ابیہا سے سوری کر کے اب سیریسلی اس ریلیشنشپ کو۔۔۔۔۔۔۔۔۔ضرار کی سرسری اٹھائی گئی نظر ساکت ہو چکی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ حیران تھا۔۔۔۔۔پریشان تھا۔۔۔اُسے دیکھ کر
سیمل۔۔۔۔۔۔ضرار کے لب پھڑپھڑائے
……………………………………………………..…..
سیمل کا ماضی۔۔۔

سیمل کی پرورش فرح بیگم نے بہت اچھے طریقے سے کی تھی۔۔۔۔اسی کا نتیجہ تھا کہ سیمل یونیورسٹی تک پہنچ گئی تھی مگر کوئی بھی الٹا کام نہیں کیا ۔۔۔۔۔
سیمل کی زندگی میں چینج تب آیا۔۔۔۔جب ایسڈ گرنے سے اس کا آدھا چہرہ جھلس گیا
تب پورے خاندان، آس پڑوس کے لوگ سب اس پر ترس کھاتے تھے۔۔۔۔۔سیمل کو یہ سب سننا بہت تکلیف دہ لگتا
اس لیے اُس نے گھر سے باہر جانا ہی ترک کر دیا۔۔۔۔۔اسٹڈی بھی ادھوری چھوڑ دی کہ یونی فیلوز کی ترحم آمیز نظریں برداشت کرنا بھی آسان نہ تھا
کچھ ماہ ایسے ہی گزرے جب فرح بیگم نے اس کے لیے رشتہ تلاش کر نا شروع کر دیا۔۔۔
پندرہ، بیس دن بعد کوئی نہ کوئی آ جاتا۔۔۔۔۔کچھ تو خاموشی سے اٹھ کر چلے جاتے اور جا کر انکار کر دیتے اور کچھ سامنے منہ پر ہی ہمدری کے دو بول بول کر منع کر دیتے۔۔۔۔۔
سیمل اس روٹین سے تنگ آ چکی تھی۔۔۔۔

وہ ٹیرس پر بیٹھی اپنی اب کی اور پہلے کی زندگی کا موازنہ کر رہی تھی جب اس کے سیل پر رونگ نمبر سے کال آئی۔۔۔۔
اس نے رونگ نمبر کہہ کر بند کر دیا۔۔۔۔۔مگر دوسری جانب جان بھوج کر ہی رونگ نمبر ملایا گیا تھا۔۔۔۔
وہ جو کوئی بھی تھا اُس نے میسیجز کے تھرو سیمل کو یہ بات بتائی کہ "" آپ کی آواز بہت خوبصورت ہے۔۔۔۔۔میں نے ذرا سی آواز سنی آپ کی اور قسم سے اتنا امپریس ہوا ہوں کہ مزید سننے کی خواہش ہے۔۔۔۔پلیز پلیز مجھ سے چند منٹ بات کر لیا کریں تاکہ میں آپ کی خوبصورت آواز سن سکوں"""
سیمل کے لیے ان حالات میں یہ ذرا سی تعریف جو ناجانے سو سے زیادہ ٹیکسٹ پر کی گئی تھی خوشگوار ہوا کا جھونکا معلوم ہوئی۔۔۔۔۔۔اس نے تھوڑی پش وپیش کے بعد اس رانگ نمبر پر بات کرنا شروع کر دی۔۔۔

اب وہ ناصرف بات کرتی بلکہ مختلف طرح کی رومینٹنک شعروشاعری رسیو بھی کرتی اور سینڈ بھی۔۔۔۔۔۔۔ایسا کرنے میں اسے عجیب سا سرور ملتا۔۔۔۔۔۔اپنی آواز کی اپنی شکل و صورت کی تعریف اُسے اٹریکٹ کرتی
تھی۔۔۔۔۔
آہستہ آہستہ یہ وبا مزید پھیلی۔۔۔۔
اب سیمل نے مختلف سوشل سائیٹس پر اکاؤنٹ بنا کر وہاں بھی مختلف لڑکوں سے چیٹ شروع کر دی تھی۔۔۔۔۔اور اُن سب کی زبانی بنا دیکھے ہی اپنی تعریف سن کر وہ اپنے احساس کمتری کی تسکین کرتی ۔۔۔۔۔وہ احساس کمتری جو اسے ضرار شاہ کی وجہ سے ملا تھا۔۔۔۔۔۔وہ جانتی تھی یہ سب جو وہ نامحرم، غیر مردوں کے ساتھ بات کرتی ہے سب غلط ہے ۔۔۔۔مگر اس کا ذمہ دار وہ ضرار شاہ کو ٹہرا کر خود کو بری وزماں قرار دیتی۔۔۔۔۔(یہی اسکی غلطی تھی وہ جرم خود کر کے مجرم ضرار کو قرار دے رہی تھی)

کہ اسی کیوجہ سے میں ایسی ہو گئی ہوں۔۔۔۔مجھے نفرت ہے تم سے ضرار شاہ نفرت۔۔۔۔۔ضرار سے انجانے میں ہوئی غلطی کو وہ نفرت اور دشمنی کی بنیاد بنا چکی تھی۔۔۔۔

……………………………………….………….......

سیمل اپنی سرگرمیوں میں گم ہو کر نماز، روزے سے کوسوں دور ہو گئی تھی۔۔۔۔فرح بیگم نوٹ کر چکیں تھیں اسکی لاپرواہی اور وہ کئی بار ٹوک بھی چکیں تھیں اُسے مگر سیمل ایک کان سے سن کر دوسرے سے نکال دیتی۔۔۔۔۔۔
وہ اس بے راہ روی کا شکار ہو کر ہدایت سے پِھر چکی تھی۔۔۔۔۔وہ لادینی سے بے دینی کیطرف نکل پڑی تھی۔۔۔۔اور یہی بے دینی اُسکی زندگی میں تباہی لانے والی تھی۔۔۔۔۔۔مگر وہ انجان تھی
اور گناہوں کی دلدل میں دھنستی گئی تھی۔۔
…………………………………………………………..

فرح بیگم کو سیمل کی حرکتیں مشکوک لگی تھیں۔۔۔چند دن کی آبزرویشن سے وہ جان چکیں تھیں کہ سیمل زیادہ وقت موبائل اور لیب ٹاپ پر بزی رہتی ہے اور شاید وہ ان سب کا غلط استعمال کر رہی ہے۔۔۔۔وہ پریشان ہو چکیں تھیں کہ اب کیا کریں اور کسطرح سیمل کو روکیں۔۔۔۔وہ اسی کشمکش میں تھیں کہ اُنہی دنوں ضرار شاہ کا پرپوزل ان کے لیے غیبی مدد ثابت ہوا
انہوں نے بلاتردوُد یہ پرپوزل سیمل کی مرضی کے خلاف ہی ایکسیپٹ کر لیا۔۔۔اور صرف پندرہ دن کے وقفے سے اُسے ضرار کے ہمراہ انگلینڈ رخصت کر دیا۔۔
…………………………………………………………

سیمل نہ تو اس شادی سے خوش تھی اور نہ شوہر سے۔۔۔۔۔وہی شخص جس سے اُس نے نفرت کی تھی اسی کو اسکی ماں نے اسکا والی وارث بنا دیا تھا۔۔۔۔۔
سیمل نے اپنے رویے سے ضرار کو باور کروا دیا تھا کہ اُسکی نظر میں ضرار شاہ کی کوئی ویلیو نہیں۔۔۔۔۔۔۔ضرار کافی حد تک ریزرو تو ہو گیا تھا مگر سیمل کا کافی خیال کرتا تھا۔۔۔۔شروع شروع میں ضرار سیمل کے لیے ایک کئیرنگ اور لونگ ہزبینڈ ثابت ہوا تھا پر سیمل اسکی توجہ کو کسی خاطر میں لائی ہی کب تھی۔۔۔۔آہستہ آہستہ ضرار اسکے بےزار ایکسپریشنز نوٹ کرنے لگا تھا اور یوں وہ دو نہیں چار قدم پیچھے ہٹ گیا تھا۔۔۔۔۔۔۔وہ سیمل کو وقت دینا چاہتا تھا تاکہ وہ پوری طرح دل سے راضی ہو کر اُسکی طرف
آئے۔۔۔۔۔۔
دوسری طرف سیمل ضرار کے ریزرو رویے
سے بہت خوش تھی اُسکی جان چھوٹ چکی تھی اس بےوقت کے رومینس سے جو اُسے الجھن میں مبتلا کر دیتا تھا۔۔۔۔۔عجیب لڑکی تھی وہ شوہر کی تعریف، اسکا رومینس الجھن میں مبتلا کرتا اور نامحرم مردوں سے یہی سب سننے کو بے چین تھی۔۔۔۔۔۔۔۔

سیمل کا سیل اور لیب ٹاپ فرح بیگم نے اسے ساتھ لانے نہیں دیا تھا۔۔۔۔۔۔
جس پر وہ کوفت کا شکار تھی۔۔۔۔سارے کانٹیکٹس موبائل میں ہی رہ گئے تھے اور اسکے پاس لیب ٹاپ نہیں تھا جس پر وہ اپنے اُن سگوں سے رابطہ کر لیتی
ضرار کے گھر میں جو فون تھا وہ اسی سے فرح بیگم سے رابطہ کر لیتی تھی۔۔
ایک دن اسی بے چینی سے تنگ آ کر اس نے ضرار سے سیل کی فرمائش کی
ضرار بیچارا اس فرمائش کو اپنے حق میں سمجھا اور اگلے ہی دن سیمل کو نیا موبائل لا دیا۔۔۔
سیمل نے اسی موبائل پر انٹرنیٹ چلا کر اپنے پرانے رابطے بحال کیے۔۔۔

ضرار کا دوست فصی اکثر ضرار کے گھر آتا، جاتا رہتا۔۔۔۔۔۔پہلے تو سیمل نے اسکی طرف توجہ نہ دی پھر ناجانے کیوں ایک دن اس سے اسکی فیملی کے متعلق پوچھ بیٹھی
فصی نے بتایا کہ وہ لاہور کے معروف سیاسی گھرانے سے بیلانگ کرتا ہے۔۔۔۔روپے پیسے کی بہتات ہے۔۔۔اسکے ہاتھ تو موقع لگ چکا تھا سیمل کو امپریس کرنے کا۔۔۔۔لہذا فصی نے خوب بھڑکیں مار کر سیمل کو امپریس کر ہی دیا تھا۔۔۔۔۔فصی کا تو کام ہی یہی تھا خوبصورت لڑکیاں پٹانا اور پھر اپنا کام نکال کر ٹاٹا بائے بائے۔۔۔۔۔

سیمل کی سرجریز نے اُسکی خوبصورتی کو ایک نیا لُک دیا تھا۔۔۔۔وہ خود بھی بہت خوش تھی اس خوبصورت سے چینج سے مگر ایک بار بھی اس ناشکری لڑکی نے ضرار کا جھوٹے منہ بھی شکریہ ادا نہیں کیا۔۔۔۔۔۔جس نے اتنا پیسہ بہا کر اُسے پھر سے اسکا چہرہ لوٹا دیا تھا۔۔۔۔۔مگر سیمل کو اُس کا خیال ہی کب تھا۔۔۔۔۔وہ تو یہ سب اپنا حق سمجھ کر وصول کر رہی تھی۔۔۔۔
اب فصی اکثر ضرار کی غیر موجودگی میں سیمل سے ملنے گھر آ جاتا ۔۔۔۔۔گرینی نے یہ سب نوٹ کر کے باتوں باتوں میں اسے ضرار کی ایبسینس میں آنے سے منع کیا۔۔۔۔۔جس پر سیمل کو ضرار کیساتھ کیساتھ اب گرینی بھی کھٹکنے لگی تھی۔۔۔۔۔
اس لیے اب وہ اکثر گرینی سے بدتمیزی کرنے لگی تھی۔۔۔اور اس بدتمیزی کی ضد میں اکثر ضرار بھی آنے لگا تھا۔۔۔۔
ضرار سیمل کا بدلاؤ محسوس کر چکا تھا۔۔۔۔شروع میں ایک دو بار اس نے ضرار کیساتھ بدتمیزی کی تھی مگر پھر اس نے زبان کی بجائے اپنے رویے، اپنے ایکسپریشنز سے بےزاریت شو کرنا شروع کر دی ۔۔۔۔۔
ضرار اسکی بدتمیزی کی تہہ تک نہ پہنچ سکا تھا شاید وہ سیمل کو اتنا گرا ہوا نہیں سمجھتا تھا۔۔۔۔۔اس لیے
سیمل گرینی کی خراب طبیعت سے فائدہ اٹھا کر ضرار کے آفس جانے کے بعد فصی سے ملنے جاتی تھی۔۔۔۔۔۔فصی سیمل کو کافی حد تک اپنی باتوں میں اُتار چکا تھا مگر فلحال اپنا مقصد نکالنے میں کامیاب نہیں ہوا تھا۔۔۔۔۔اس سب میں وہ بھی یہ بھول چکا تھا کہ وہ جس لڑکی کو پٹا رہا ہے وہ اسکے دوست کی بیوی ہے۔۔۔۔۔۔
سیمل اپنے پیچھلے بوائے فرینڈز سے کنٹیکٹ ختم کر چکی تھی۔۔۔۔
اب اسے فصی جو مل چکا تھا اپنی تعریف کروانے کے لیے۔۔۔۔۔ جو ناصرف زبان سے تعریف کرتا بلکہ اکثر اپنے ہاتھوں اور ہونٹوں کا بھی استعمال کرتا اور سیمل اسکی حرکتوں پر اک ادا سے مسکرا دیتی۔۔۔۔۔اصل میں وہ اس گندگی میں اس حد تک دھنس چکی تھی جہاں انسان کو اپنا کوئی بھی عمل غلط نہیں لگتا۔۔۔۔۔ جہاں وہ ہر گناہ اپنی ذاتی لذت کی خاطر ہر نفع نقصان سے بالاتر ہو کر کرتا
ہے۔۔۔۔۔اور
جہاں وہ بھول جاتا ہے کہ
کوئی ہے جو ہر وقت اُسے دیکھ رہا ہے۔۔۔۔
کوئی ہے جو اعمال کا بدلہ دینے والا ہے۔۔۔۔۔کوئی ہے جو انسان کو اُس کے کیے کی جزا و سزا دینے کا حق رکھتا ہے۔۔۔۔۔۔۔
بے شک وہ قادر و مطلق ہے جو ہر ظاہر وباطن سے آگاہ ہے۔۔۔۔۔
……………………………………….….................

ضرار نے اُس روز سیمل اور فصی کو اپنے گھر کے لاؤنج میں نازیبا حرکتیں کرتے دیکھ کر ڈائیورس دے دی تھی۔۔۔۔۔
کوئی بھی غیرت مند مرد اپنی عورت کو کسی دوسرے مرد کی بانہوں میں برداشت نہیں کرتا چاہے وہ کسی بھی مذہب سے تعلق رکھتا ہو۔۔۔اسی لیے ضرار کی غیرت کو مزید اس عورت کیساتھ رہنا زیب نہیں دیتا تھا۔۔۔۔۔اس نے سیمل کو فصی کیساتھ ہی گھر سے نکال دیا تھا اور ڈائیورس پیپر فصی کے گھر پر پہنچا دیے تھے۔۔۔۔۔
یہ افتاد فصی کے گلے پڑ چکی تھی وہ تو صرف اپنے چند لمحے رنگین کرنا چاہتا تھا نا کہ سیمل سے شادی کر کے گھر بسانا چاہتا تھا۔۔۔۔۔۔
فصی نے سب سے پہلے تو سیمل کو شراب اور نشے کا عادی بنا کر اپنے کنٹرول میں کیا اور پھر اسی نشے کا فائدہ اٹھا کر اُس نے سیمل کو یوز کیا۔۔۔۔
ایک بار نہیں ناجانے کتنی بار ۔۔۔۔۔۔سیمل کی نسوانیت کی تذلیل ہوئی مگر اسے کوئی پرواہ ہی کب تھی۔۔۔۔۔وہ بدبخت اپنی مرضی سے ہی تو پھنسی تھی اس دلدل میں۔۔۔۔۔

فصی اُسے اپنے ساتھ مختلف پارٹیز میں لے جاتا۔۔۔۔۔اب تو سیمل بھی ایسی جگہوں پر جانا پسند کرنے لگی تھی۔۔۔۔
ایسی ہی ایک پارٹی میں سیمل کی ملاقات دبئی کے معروف بزنس مین لبِیب بن ہادی سے ہوئی تھی۔۔۔۔وہ پینتیس سے چالیس کی ایج کا خوشکل مرد تھا۔۔۔
سیمل کو وہ شخص پہلی نظر میں ہی لوٹ چکا تھا۔۔۔۔سیمل کو ضرار اور فصی کی ڈیشنگ پرسینلٹی نے بھی کبھی اسطرح اٹریکٹ نہیں کیا تھا جسطرح لبِیب بن ہادی کر چکا تھا۔۔۔۔
وہ وہاں کسی ایگزیبیشن کے سلسلے میں آیا تھا۔۔۔۔۔اور سیمل اس دورانیے میں ہی اُسے قابو میں کر لینا چاہتی تھی۔۔۔۔اس کام میں تو وہ اب ماہر ہو چکی تھی۔۔۔۔
اُس نے فصی کے تھرو ہی مزید معلومات لیں اور ہر اس جگہ پہنچ جاتی جہاں وہ ہوتا۔۔۔۔لبِیب بھی ایک بزنس مین تھا کیسے نا سمجھتا وہ ناصرف اسکی موجودگی کو محسوس کر چکا تھا بلکہ کافی حد تک اصل بات بھی سمجھ چکا تھا۔۔۔۔
اُسے بھی یہ خالص پاکستانی بیوٹی پسند آئی تھی۔۔۔۔۔۔اور وہ سوچ چکا تھا اُسے کیا کرنا ہے۔۔۔۔۔
لبِیب نے خود ہی بات چیت میں پہل کی اور سیمل کو اپنی کمپنی کے لیے ماڈلنگ کی آفر کی۔۔۔۔۔۔سیمل کی تو لاٹری نکل آئی تھی وہ تو بس کسی طرح اس کے قریب رہنا چاہتی تھی۔۔۔۔اسلئیے سیمل نے فوًرا حامی بھر لی۔۔۔۔۔۔۔۔
لبیب اُسے اپنے ساتھ دبئی لے آیا۔۔۔۔فصی کا دل بھی سیمل سے بھر چکا تھا اس لیے وہ بھی کوئی رکاوٹ نہ بنا اور سیمل خوشی خوشی لبِیب کیساتھ دبئی آ گئی۔۔۔۔۔۔۔
لبیب نے اُسے ایک اپارٹمنٹ اور گاڑی گفٹ دی۔۔۔۔۔سیمل سمجھ رہی تھی شاید وہ بھی اُسے پسند کرنے لگا ہے تبھی تو اتنے ایکسپینسو گفٹس دیے تھے۔۔۔۔۔مگر وہ اصل حقیقت سے بے خبر تھی۔۔۔

0/Post a Comment/Comments

Please Do Not Enter Any Spam Link In THe Comment box.

Previous Post Next Post