Kisi Meharban Na Aakey Ep No 13 | Urdu Novels

Kisi Meharban Na Aakey Ep No 13 | Urdu Novels


کسی مہربان نے آکےاز قلم ماہ وش چوہدریقسط نمبر 13


لبیب نے سیمل سے اپنے برینڈز کے میگزین شوٹ کے لیے ماڈلنگ کروائی تھی ۔۔۔۔اور اس کا معقول معاوضہ سیمل کو دیا تھا۔۔۔
سیمل یہاں اسکی نوکری کرنے نہیں بلکہ اس سے شادی کرنے کے لیے آئی تھی۔۔۔۔مگر لبیب تو اس سے صرف اپنا کام لے رہا تھا۔۔۔
تھک ہار کر سیمل نے خود ہی لبیب سے بات کرنے کا سوچا
مگر اسکی خوشی کا اس وقت کوئی ٹھکانہ نہ رہا جب لبیب نے بلا چوں چراں اسکے پرپوزل کو ایکسیپٹ کر لیا۔۔۔۔
لبیب نے اپنی کچھ پرسنل مجبوریاں بتا کر فلحال اس شادی کو خفیہ رکھنے کو کہا۔۔۔۔۔
سیمل تو بس اس سے شادی کرنا چاہتی تھی اسے ہمیشہ کے لیے اپنا بنانا چاہتی تھی جس نے اسکے دل کے دروزاے پر محبت کی پہلی دستک دی تھی۔۔۔۔
یوں سیمل کی رضامندی پر لبیب نے اس سے خفیہ نکاح کر لیا۔۔۔۔۔اور محض پندرہ دن بعد ہی وہ اپنے اصلی روپ میں سیمل کے سامنے تھا۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں ہر گز نہیں جاؤں گی لبیب تم نے سوچ بھی کیسے لیا کہ میں یہ سب کروں گی۔۔۔وہ لبیب کی بات پر غصے میں آئی
زیادہ ستی ساوتری بننے کی ضرورت نہیں اوکے۔۔۔تمہاری اصلیت کیا ہے میں اچھے سے جانتا ہوں۔۔۔۔۔یہ تو میرا احسان مانو کہ تم سے نکاح کر لیا ورنہ میں یہ سب بغیر نکاح کے بھی کرنا جانتا ہوں۔۔۔۔تم ابھی نئی ہو اس فیلڈ میں آگے چل کر سب جان جاؤ گی۔۔۔۔ڈارلنگ۔۔۔۔وہ منچھوں کو بل دیتا مسکرایا

تم لبیب بن ہادی۔۔۔۔اپنی بیوی کو غیر مردوں کے بیڈروم سجانے کا بول رہے ہو۔۔۔۔وہ بھی صرف پیسے کی خاطر ۔۔۔۔۔
پیسے کی خاطر تم نکاح کے رشتے کو آلودہ کر رہے ہو۔۔۔۔اس رشتے کی توہین کر رہے ہو۔۔۔۔۔سیمل غصے سے بولی

تم شاید بھول چکی ہو سیمل مگر میں تمہیں یاد کروا دیتا ہوں ۔۔۔۔تمہارا اور ضرار شاہ کا رشتہ بھی نکاح ہی کا تھا پھر تم نے کیوں اس رشتے کی توہین کی۔۔۔۔اور فصی کیساتھ رنگ رلیاں منائیں۔۔۔۔بولو۔۔۔۔بیوقوف سمجھتی ہو کیا مجھے۔۔۔۔۔نہیں سیمل بی بی نہیں۔۔۔بہت پرانا کھلاڑی ہوں میں اور مجھے چکما دینا آسان نہیں۔۔۔۔اور تم تو ہو ہی احسان فراموش مگرمیں ضرار شاہ نہیں جس نے تم سے اپنی غلطی سدھارنے کی خاطر ہمدردی میں شادی کی اور پھر اپنا پیسہ برباد کر کے تم جیسی عورت کی بوتھی کو سنوارا۔۔۔۔۔لبیب نے اسکی تھوڑی کو جکڑا۔۔۔۔
اور تم احسان فراموش جسے عزت راس نہیں آئی۔۔۔۔۔۔اسی مہرباں کے دوست کیساتھ بھاگ آئی اور بنا کسی رشتے کہ اسکے ساتھ مسلسل چھ ماہ رہی۔۔۔۔۔اور پھر مجھ پر لٹو ہوتی یہاں تک آ گئی ۔۔۔۔اور اب وہی لڑکی مجھے شادی، نکاح، اخلاقیات کی اہمیت بتا رہی ہے ۔۔۔۔۔۔ہاؤ سٹرینج بے بی۔۔۔۔۔۔وہ ہنسا
تت۔۔۔۔۔تمہیں یہ سب کیسے۔۔۔۔پتہ۔۔۔۔سیمل اسکی انفارمیشن پر شاکڈ تھی
میں بتا چکا ہوں۔۔۔۔۔بہت پرانا اور ماہر کھلاڑی ہوں ساری معلومات کے بعد ہی شکار پھانستا ہوں۔۔۔۔اس لیے ہلکا نہ لو مجھے۔۔۔۔۔وہ خباثت سے قہقہ لگاتا بیڈ پر ڈھیر ہوا۔۔۔۔
اور میں یہ بھی جانتا ہوں۔۔۔۔۔تمہاری ماں تمہاری ضرار سے شادی کے بعد مر گئی تھی اور تمہارے دونوں بھائیوں نے تمہیں منہ نہیں لگایا اور ماں کے مرنے کے بعد تم سے کوئی رابطہ نہیں کیا۔۔۔۔۔اب بتاؤ کہاں جاؤ گی اس لیے نخرے چھوڑو اور کام کرو ہر ڈیل کا تھرٹی پرسینٹ تمہیں ملے گا۔۔۔۔
اور جہاں تک ہے نکاح کی بات تو تم نے ٹھیک کہا ہمیں اس رشتے کی توہین نہیں کرنی چاہیے۔۔۔۔۔۔ میں تمہیں لائف پارٹنر نہیں بلکہ بزنس پارٹنر بنانے کو لایا تھا تاکہ تم مجھے ہیلپ آوٹ کر سکو۔۔۔۔کیونکہ مجھے خالص پاکستانی بیوٹی ہی چاہیے تھی جو تمہاری صورت میں مل چکی ہے۔۔۔
یہ لو۔۔۔۔۔لبیب نے اُسے الماری سے نکال کر دو پیکٹ تھمائے۔۔۔۔
یہ ۔۔۔۔یہ کیا۔۔۔۔۔ہے۔۔۔وہ ہکلائی
ایک میں طلاق کے پیپرز ہیں۔۔۔۔یہ رشتہ یہیں تک کا تھا۔۔۔۔اور
دوسرے پیکٹ میں سی ڈی ہے ۔۔۔۔لگا کر دیکھ لینا کیا ہے۔۔۔؟؟؟ اور پھر فیصلہ کرنا کیا کرنا چاہئیے تمہیں۔۔۔؟؟
گڈ لک بے بی۔۔۔۔۔۔وہ اسکے گال سے انگلی ٹچ کرتا چلا گیا
اور سیمل ان پیکٹس کو پکڑے ساکت تھی۔۔
یہ دنیا مکافات عمل ہے۔۔۔اس گھڑی سیمل کو یہ بات اچھی طرح سمجھ آ چکی تھی
………………………………………………………..…

ضرار آپ بلکل بھی اچھا نہیں کر رہے ہیں میرے ساتھ۔۔۔۔ایسا بھی کیا کر دیا میں نے کہ۔۔۔۔۔۔۔ابیہا گھٹنوں میں سر دئیے رو پڑی
جب دل کھول کر رو چکی تو آنسو پونچھ لیے۔۔۔۔۔
آپ نہیں منائیں گے تو کیا ہوا میں منا لوں گی آپ کو۔۔۔۔۔۔۔
آخر کو بیوی ہوں اور حق رکھتی ہوں آپ پر۔۔۔۔دیکھتی ہوں کیسے نہیں مانیں گے
آپ۔۔۔۔۔۔
ابیہا ضرار کو منانے کا ارادہ کرتی اٹھی اور ٹیرس پر آ گئی
اب وہ ضرار کے آنے کا انتظار کر رہی تھی
…………………………………………………………….

سیمل نے کانپتے ہاتھوں سے پلے کا بٹن دبایا۔۔۔۔۔۔۔
اور۔۔۔۔۔۔۔اور
سامنے سکرین پر خود کو ہی اتنی نازیبا حالت میں دیکھ کر آنکھیں میچ لیں
یا خدا یہ کیسی ذلت ہے۔۔۔۔؟؟؟

یہ وہی ذلت ہے سیمل فاروق جو تم نے خود چُنی تھی۔۔۔۔۔اپنے لیے اپنی مرضی، اپنی خوشی سے نامحرم مردوں سے رابطے بڑھا کر۔۔۔۔۔بدکرداری جیسا مکروہ فعل کر کے۔۔۔۔۔اپنے شوہر کو دھوکہ دے کر۔۔۔۔ چند تحسین آمیز جملوں کی لذت کی خاطر اپنی عزت کو نیلام کر کے۔۔۔۔۔اُسکے ضمیر نے اُسے آئینہ دکِھایا
کیا ملا تمہیں یہ سب کر کے تم گنہگاروں میں شامل ہو چکی ہو۔۔۔۔ذلت۔۔۔۔ذلت ہی اب تمہارا نصیب ہے۔۔۔۔بچنا چاہتی تو بچ سکتی تھی تم۔۔۔۔۔۔۔مڑنا چاہتی تو مڑ سکتی تھی تم۔۔۔۔۔مگر تم تو دنیاوی لذت کی خاطر اپنی آخرت خراب کر چکی ہو۔۔۔۔۔اب یہی تمہاری سزا ہے۔۔۔۔بھگتو۔۔۔۔بھگتو۔۔۔۔اس سزا کو آخری سانس تک۔۔۔۔۔اس کا ضمیر اسے کچوکے لگا رہا تھا

یہ کیا کر دیا میں نے۔۔۔۔۔یہ کیا کر لیا میں
نے۔۔۔۔۔
وہ دھاڑیں مار مار کر روتی چلی گئی
………………………………………………………………

سیمل۔۔۔۔۔۔ضرار کے لب پھڑپھڑائے

سیمل ڈانسنگ فلور پر ڈی ایس پی راؤ کے اکلوتے بیٹے جازم راؤ کی بانہوں میں بانہیں ڈالے ناچنے میں مصروف تھی
یہ۔۔۔۔یہ یہاں۔۔۔۔فصی۔۔۔۔فصی کہاں گیا۔۔۔اوہ میرے خدا یہ عورت۔۔۔۔یہ عورت اتنی نیچ۔۔۔۔۔۔ضرار صدمے سے اس سے آگے کچھ بھی نہ سوچ سکا
چند منٹ بعد اس نے اپنا جھکا سر اٹھایا اور سیگرٹ ایش ٹرے میں مسلتا۔۔۔۔اپنا سیل اور کیز اٹھا کر آندھی طوفان کی طرح وہاں سے نکلا۔۔۔۔۔۔
پھر بھی سیمل کی نظر اُس پر پڑ چکی تھی
…………………………………………………………….

ضرار۔۔۔۔ضرار شاہ۔۔۔۔۔وہ گاڑی کے پاس پہنچا ہی تھا جب اسے اپنے پیچھے نسوانی آواز سنائی دی
وہ بنا پلٹے گاڑی ان لاک کر کے بیٹھنے ہی والا تھا جب سیمل نے اسکا بازو پکڑ کر روکا

ڈونٹ ٹچ می یو ایڈیٹ۔۔۔۔تمہاری ہمت کیسے ہوئی اپنی گندی زبان سے میرا نام لینے کی اور مجھے چھونے کی۔۔۔۔ضرار پوری طاقت سے اسکا ہاتھ جھٹک کر غرایا
ض۔۔۔ضرار۔۔۔پلیز لسن۔۔۔۔مم۔۔۔۔۔مجھے۔۔۔۔۔مجھے بات کرنی ہے۔۔۔مجھے معافی مانگنی ہے تم سے ضرار۔۔۔۔پلیز میری بات سن لو خدا کے لیے۔۔۔سیمل نے روتے ہوئے اپنے ہاتھ اُسکے سامنے جوڑے
مجھے تمہاری کوئی بات نہیں سُننی ہے۔۔۔۔میں تمہیں نہیں جانتا۔۔۔۔ہٹو سامنے سے۔۔۔۔
پلیز ضرار تمہیں گرینی کی قسم۔۔۔بس ایک بار میری بات سن لو۔۔۔۔۔پلیز ضرار پلیز۔۔۔۔وہ ملتجی ہوئی
ضرار کو گرینی کی قسم پر چاروناچار رُکنا پڑا۔۔
ضرار مجھے میری بدکرداری کی سزا مل چکی ہے۔۔۔۔مجھے نامحرم مردوں سے رابطوں کی ذلت لے ڈوبی ہے۔۔۔۔۔۔میں انہی مردوں کا کھلونا بن چکی ہوں ضرار۔۔۔۔۔کل جو مرد میری تعریفوں کے پل باندھتے تھے۔۔۔۔آج وہی مجھ سے کھیلتے ہیں کھیل کر پھینک دیتے ہیں اور۔۔۔۔۔۔ اور میں۔۔۔۔۔میں کسی اور کے ہاتھ لگ جاتی ہوں۔۔۔۔یہ سلسلہ ختم نہیں ہو رہا۔۔۔۔مم۔۔۔۔میری اذیت بڑھتی جا رہی ہے۔۔۔۔میں اس دلدل میں سر سے پاؤں تک دھنس چکی ہوں ضرار۔۔۔۔۔۔نکلنا بھی چاہوں تو نہیں نکل سکتی۔۔۔۔مجھ جیسی غلیظ عورت کو موت بھی نہیں قبولتی اسی لیے تو ابھی تک زندہ ہوں۔۔۔۔اگر غیرت مند ہوتی تو خود کی اتنی تذلیل کے بعد مر جاتی
مگر ۔۔۔مگر میری روح میرے جسم سے جدا نہیں ہوتی۔۔۔۔۔یہ۔۔۔۔۔۔ یہ مجھے زندہ رکھ کر روز مارتی ہے۔۔۔۔۔۔ضرار مجھے معاف کر دو ہو سکے تو مجھے موت کی بدعا نہیں دعا دے دو۔۔۔۔ضرار خدا سے کہو مجھے اس ذلت سے آزاد کر دے۔۔۔۔وہ زمین پر سجدے کی حالت میں جھکی ہچکیوں سے رو رہی تھی

ضرار کے پاس اُسے معاف کرنے کے سوا کوئی چارہ نہ تھا۔۔۔۔سیمل کو اسکے کیے کی بہت ذلت آمیز سزا قدرت کیطرف سے مل چکی تھی۔۔۔۔۔اسے نامحرموں سے رابطوں اور ناجائز تعلقات کی بہت گھناؤنی سزا ملی تھی۔۔۔۔۔اب وہ بھی اسے برا بھلا کہہ کر کیا کرتا۔۔۔۔اسلئیے
وہ اُسے معاف کر چکا تھا۔۔۔۔۔
ضرار نے سیمل کو معاف کر دیا تھا

""" جا معاف کیا تجھے
جی لے اب اپنی مرضی کی زندگی
ہم محبت کے بادشاہ ہیں
بے وفاؤں کے منہ نہیں لگتے """"

0/Post a Comment/Comments

Please Do Not Enter Any Spam Link In THe Comment box.

Previous Post Next Post