Kisi Meharban Na Aakey Ep No 2 | Urdu Novels

Kisi Meharban Na Aakey Ep No 2 | Urdu Novels



کسی مہربان نے آکےاز قلم ماہ وش چوہدری
قسط نمبر 2


ابیہا نے دانیال ملک کے منہ سے جگہ کا سنا تو ہچکچائی۔۔
سر آپ یہ کیا کہہ رہے ہیں۔۔۔؟؟
ٹھیک کہہ رہا ہوں۔۔۔اگر مجھ سے ملنا چاہتی ہو تو کل شام سات بجے وہاں آ جانا ورنہ تمہاری مرضی۔۔۔۔دانیال ملک نے کہہ کر کھٹاک سے کال کاٹ دی۔۔۔
ابیہا کے پاس اُس کی بتائی گئی جگہ پر جانے کے سوا اور کوئی چارہ نہ تھا۔۔۔
………………………………………

وہ لڑکی ضرار شاہ کے پاس سے ہوتی ہوئی اُسکے پیچھلے ٹیبل پر چئیر گھسیٹ کر بیٹھی۔۔۔
ضرار نے گردن موڑ کر پیچھے دیکھا
اس لڑکی کو دانیال ملک کی ٹیبل پر بیٹھے دیکھ کر ضرار کو بلکل حیرت نہ ہوئی وہ جانتا تھا کہ۔۔۔۔
دانیال ملک کو نت نئی لڑکیوں سے غرض ہوتا ہے نہ تو انکی کلاس سے اور نہ ہی حلیے سے ۔۔۔
………………………………………

دو سال میں یہ ناجانے کتنواں رشتہ تھا جو
انکار کر گئے تھے۔۔۔۔اب تو سیمل نے گنتی کرنا بھی چھوڑ دی تھی۔۔۔۔
وہ ٹیرس پر بیٹھی۔۔۔۔۔اپنی بار بار کی ریجیکشن کو سوچ رہی تھی۔۔۔
پتا نہیں اور کتنی ذلت سہنی باقی ہے سب گھر والوں کے سامنے۔۔۔
کاش کہ میرے ساتھ وہ سب نہ ہوتا جو ہوا۔۔۔۔کاش میرا چہرہ بھی باقی لڑکیوں کی طرح۔۔۔۔۔۔۔

تم۔۔۔۔تم ایک بار میرے سامنے آ جاؤ ۔۔۔میں تمہیں وہ اذیت دوں جو میں نے سہی ہے ان دو سالوں میں۔۔۔۔۔۔میری زندگی برباد کر کے ناجانے کہاں دفعان ہو گئے ہو۔۔۔۔۔۔میری بدعائیں ہر گز تمہیں سکون لینے نہیں دیں گی۔۔۔۔۔ضرار شاہ
سیمل نے آسمان کی طرف دیکھ کر اُسے ہر بار کی طرح بے سکونی کی بدعا دی۔
………………………………………

اسلام و علیکم سر۔۔۔۔۔۔ابیہا نے ڈری ڈری آواز میں کہا۔۔
ہونں۔۔۔دانیال ملک نے سر ہلا کر شراب کا
گھونٹ بھرا
جی تو مس ابیہا ہاشم کس سلسلے میں ملنا
چاہتیں تھیں آپ۔۔۔۔۔وہ جانتا تھا مگر پھر
بھی پوچھا
وہ۔۔۔وہ سر۔۔۔۔ مم۔۔۔۔مجھے۔۔۔۔آپ کی آفر
منظور ہے۔۔۔۔وہ بمشکل بات مکمل کر پائی
آفر دو ہفتے پہلے آپ کو جاب کے دوران دی گئی تھی۔۔۔۔جب آپ بہت پاکیزہ بی بی بن کر آفر اور
جاب دونوں میرے منہ پر مار کر آئیں تھیں۔۔۔۔

لفظ" آفر "سن کر ضرار شاہ کے کان کھڑے ہو چکے تھے۔۔۔۔۔آج وہ تین کام ایک ساتھ کر رہا تھا۔۔۔۔شراب۔۔۔۔۔۔سیگرٹ۔۔۔۔۔۔اور تیسرا پیچھلے ٹیبل پر موجود دانیال ملک اور ابیہا ہاشم کی گفتگو ۔۔۔۔وہ جانتا تھا کسی کی پرسنل گفتگو سننا ایک غیر اخلاقی حرکت ہے مگر پھر بھی وہ ایسا
کر رہا تھا۔۔۔
اتنی جلدی شرافت کا چولہ اتار پھینکا۔۔۔۔۔ہاؤ سٹرینج۔۔۔۔۔۔وہ تمخسرانہ ہنسا
سر مجھے پیسوں کی ضرورت ہے۔۔۔۔۔وہ منمنائی
پیسوں کی ضرورت تو تب بھی تھی۔۔۔از ناٹ۔۔۔؟؟؟؟
جج۔۔۔۔۔جی۔۔۔۔۔
تو پھر۔۔۔۔۔۔؟؟
سر پلیز میں اس دن کے لیے ایکسکیوز کرتی ہوں۔۔۔۔
اوکے۔۔۔۔۔۔دانیال نے کندھے اچکائے
مگر دو ہفتے پہلے کی آفر اور آج کی آفر میں تھوڑا ردوبدل ہو گا۔۔۔۔وہ خباثت سے مسکرایا
کک۔۔۔۔۔۔کیا۔۔۔۔؟؟؟؟

وہ آفر پانچ لاکھ اور ایک رات کی تھی۔۔۔۔۔مگر اب یہ آفر دس لاکھ اور دس دن کی ہو گی۔۔۔۔۔۔ایکچوئلی میں تمہیں اپنے ساتھ سنگا پور لے جانا چاہتا ہوں۔۔۔۔۔کہو کیا خیال ہے۔۔۔۔۔وہ گھونٹ بھرتا اُسے ہی دیکھ رہا تھا
مم۔۔۔۔۔مگر سر میں۔۔۔۔میں کیسے جا سکتی ہوں۔۔۔۔وہ دانیال ملک کی کمینگی جانتی تھی مگر وہ اسقدر گندا ہے یہ آج جانا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔
کیوں بھئی ایسے کاموں میں تو ایسا ہی ہوتا ہے اور ویسے بھی اتنے پیسوں میں پورے سال کی بکنگ ہو جاتی ہے اور تم صرف دس دن نہیں نکال پا رہی۔۔۔۔
سر پلیز ایسا مت کریں ۔۔۔میری مدر کا آپریٹ ہونا بہت ضروری ہے سر۔۔۔۔مجھے پیسوں کی اشد ضرورت ہے میں آپ کے ساتھ نہیں جا سکتی پلیززز سر۔۔۔۔۔
میں آفر بڑھا دیتا ہوں۔۔۔۔۔۔وہ کمینگی سے آنکھ مارتا بولا
نن۔۔۔۔۔نہیں۔۔۔۔۔سر میں نہیں جا سکتی

اوکے فائن ایز یو وش۔۔۔۔۔اگر نہیں منظور تو تم جا سکتی ہو مگر میری ایک بات یاد رکھنا اتنے
پیسوں کی کوئی بھی تمہیں آفر نہیں دے گا۔۔۔۔اور ویسے بھی بہت دیکھی ہیں تم جیسی۔۔۔۔۔ابھی
چند دن پہلے مجھے بے حیائی کے طعنے دے کر آج اُسی بے حیائی کی حامی بھرنے آئی ہو اور
اسی طرح کل دس تو کیا پانچ لاکھ میں بھی باخوشی آؤ گی۔۔۔۔وہ ہنسا
ہاں اگر پیسے کم ہیں تو بتاؤ۔۔۔۔میں اسکا متبادل ڈھونڈ دیتا ہوں۔۔۔۔وہ میرا دوست ہے ناں رضی اکثر آفس میں دیکھا ہو گا تم نے ۔۔۔۔اُسے بھی تم بھا گئی ہو۔۔۔۔وہ بھی منہ مانگی قیمت۔۔۔۔۔۔۔

انففففف۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ابیہا اس سے زیادہ اپنی نسوانیت
کی تذلیل برداشت نہیں کر سکتی تھی۔۔۔ٹیبل پر ہاتھ مار کر کھڑی ہوئی
انف۔۔۔۔۔۔انف دانیال ملک۔۔۔۔۔تم۔۔۔۔تم۔۔۔۔تو انسان کہلوانے کے لائق بھی نہیں ہو اس لیے میں
اپنے الفاظ تم جیسے گندگی میں لتھڑے غلیظ پر ضائع نہیں کروں گی۔۔۔۔ایسی آفریں اپنے جیسیوں کو دو سمجھے۔۔۔۔۔۔میری بے بسی نے مجھے تم جیسے شیطان کی آفر قبول کرنے کو مجبور کیا
ورنہ۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ غصے سے کہتی چیئر کو ٹھوکر مارتی آنسو روکتی کلب سے باہر نکلی۔۔۔۔

لعنت ہو مجھ پر میں اتنا گر گئی کہ خود کو بیچنے چلی تھی۔۔۔۔۔تف۔۔۔۔۔تف ہے تجھ پر ابیہا ہاشم۔۔۔تف۔۔۔۔۔آخر کو نکلی ناں ایک جواری کی اولاد۔۔۔۔۔وہ آنسو پونچھتی خود کو ہی لعنت ملامت کر تی سنسان سی سڑک پر تیز تیز قدم اُٹھاتی آگے بڑھ رہی تھی۔
میرے مالک مجھے معاف کر دے ۔۔۔اتنا بڑا گناہ کرنے جا رہی تھی میں۔۔۔۔اپنی عزت کی چادر اپنے ہی ہاتھوں داغدار کرنے چلی تھی۔۔۔۔۔۔۔اُوف
توبہ۔۔۔۔میرے مالک توبہ۔۔۔۔۔۔ناجانے کیسے میں نے ایسا سوچا بھی۔۔۔۔۔
پیچھے سے آتی بائیک پر موجود نوجوانوں نے موقعے سے فائدہ اٹھا کر ابیہا کے پرس کو
چھپٹا۔۔۔۔وہ اپنی سوچوں میں چلی جا رہی تھی ایسی افتاد کے لیے ہر گز تیار نہ تھی۔۔۔۔جھٹکا لگنے پر اچھلی
رکو۔۔۔۔۔رکو۔۔۔۔۔۔میرا پرس۔۔۔۔میرا سیل۔۔۔۔۔وہ چلاتی رہ گئی
مگر وہ لوگ اپنا کام دکھا کر جا چکے تھے۔۔۔۔
………………………………………

سیمل بیٹا کیا کر رہی ہو۔۔۔۔۔۔فرح بیگم نے سیمل کے روم میں آکر اُسے اسٹڈی ٹیبل پر بیٹھے دیکھ کر پوچھا
کچھ نہیں بس ناول پڑھ رہی تھی۔۔۔کوئی کام تھا کیا۔۔۔؟؟؟وہ ماں کی طرف آئی
ہاں یہاں بیٹھو میرے پاس۔۔۔۔انہوں نے بیڈ کیطرف اشارہ کیا
سیمل نے بیڈ پر لیٹ کر سر اُنکی گود میں رکھا۔۔۔
انہوں نے جھک کر بیٹی کا ماتھا چوما
اچھا اب مسکا مت لگائیں بتائیں کیا کام تھا۔۔۔۔
بہت بدتمیز ہو ۔۔۔۔۔مائیں بھی کبھی مسکا لگاتیں ہیں اولاد کو۔۔۔۔
میں تو مذاق کر رہی تھی مائی سویٹ مام۔۔۔۔۔سیمل نے مسکراتے ہوئے ماں کے ہاتھ پکڑے۔
اچھا سنو میری بات۔۔۔
فرمائیں ملکہِ عالیہ۔۔۔۔۔شرارت سے چھیڑا
سییییمل۔۔۔۔۔۔۔۔
اوکے۔۔۔۔سیریس۔۔۔۔۔سیمل نے بیبے انداز میں منہ پر انگلی رکھی۔
وہ۔۔۔۔۔۔تمہارے لیے بہت اچھا پرپوزل آیا ہے۔۔۔
ہونں۔۔۔۔وہ تمسخرانہ ہنسی
اچھا پرپوزل تو ہر دو چار ہفتے بعد آتا ہے۔۔۔۔مگر ہر اچھا پرپوزل آپ کی داغدار بیٹی کو ریجیکٹ کر جاتا ہے امی کوئی نئی بات نہیں۔۔۔۔۔وہ افسردہ سی بولی
ایسا نہیں کہتے میری جان۔۔۔۔تم۔۔۔۔تم لاکھوں میں ایک ہو۔۔۔
آپ ماں ہیں اور آپکو اپنی بیٹی ہر عیب سے شفاف ہی نظر آئے گی
میری بیٹی میں کوئی عیب نہیں۔۔۔۔فرح بیگم تڑپ کر بولیں
یہ ۔۔۔۔۔یہ عیب نہیں تو کیا ہے۔۔۔۔؟؟؟سیمل نے اپنے چہرے کی طرف اشارہ کیا جہاں دائیں جانب
کنپٹی سے کان کے نیچے تک سیاہ نشان تھے جو اُسکے چہرے کی خوبصورتی کو مانند کر رہے تھے

یہ۔۔۔۔یہ سب ہونا لکھا تھا میری جان۔۔۔۔فرح بیگم نے اُسکے آنسو پونچھے
مگر میرے ساتھ ہی کیوں۔۔۔۔؟؟وہ ماں کے گلے لگ کر پھوٹ پھوٹ کر رو دی
………………………………………

ابھی جو لڑکی یہاں سے نکلی ہے وہ کس طرف گئی ہے۔۔۔۔۔۔ضرار شاہ نے کلب کے گیٹ پر موجود گن مین سے پوچھا۔۔۔
کون سر۔۔۔۔۔؟؟؟
ابھی چند منٹ پہلے جو نکلی ہے۔۔۔۔۔
سر وہ لڑکی جس نے چادر اوڑھ رکھی تھی۔۔۔۔(یہاں چادر اُس کی پہچان بن گئی تھی اور وہ بد بخت اُسی چادر کو اتارنے چلی تھی )
ہاں۔۔۔۔ہاں وہی۔۔۔۔۔
سر وہ دائیں طرف گئی ہے ۔۔۔۔کیا آپ جانتے ہیں اُسے۔۔۔۔۔؟؟؟
جتنا پوچھا گیا اتنا ہی جواب دو انڈراسٹینڈ۔۔۔۔۔وہ غصے سے کہتا دائیں طرف بھاگا۔۔۔
گن مین نے حیرت سے اُسے ایک لڑکی کے پیچھے بھاگتے دیکھا۔۔۔۔۔۔
………………………………………

میں کیوں یہاں ہوں مجھے بھی لے جاؤ۔۔۔۔لے جاؤ مجھے بھی۔۔۔لوٹ لو سب۔۔۔۔بکاؤ مال ہوں۔۔۔۔میں۔۔۔۔۔ہاں۔۔۔ہاں۔۔۔۔آؤ۔۔۔۔۔لگاؤ۔۔۔۔میری بولی۔۔۔۔۔میں تیار ہوں۔۔۔۔لگاؤ بولی۔۔۔۔
ابیہا پرس چھن جانے کے صدمے سے زمین پر
بیٹھی بنا سوچے سمجھی چلا رہی تھی
پرس میں موبائل اور چند ہزار روپے تھے جو وہ
ایک کولیگ سے مانگ کر لائی تھی تاکہ گھر کا کرایہ ادا ہو سکے اور اب پرس چھن چکا تھا اور وہ صدمے سے چور گھٹنوں میں سر دیے اونچی آواز میں رو رہی تھی۔۔۔۔
کچھ فاصلے پر کھڑے ضرار شاہ نے یہ چیخ وپکار
با خوبی سُنی۔۔۔۔
وہ آہستگی سے چلتا ہوا پاس آیا۔۔۔

ابیہا نے اپنے قریب کسی کی موجودگی محسوس کرتے ہوئے گھٹنوں سے سر اُٹھایا اور سٹریٹ لائٹس کی مدھم روشنی میں اپنی طرف دیکھتے اُس ہینڈسم سے شخص کو دیکھا۔۔۔۔۔۔۔

یہ یقینًا اُسی کلب سے میرے پیچھے آیا ہو گا۔۔۔وہ جلدی سے کھڑی ہوئی
میں۔۔۔۔۔میں۔۔۔۔۔تمہارے ساتھ جانے کو تیار ہوں۔۔۔۔۔
پرس چیھننے کا صدمہ شاید اُسکے دماغ کو مفلوج کر چکا تھا۔۔اسلیے پھر سے وہی کچھ کہہ رہی تھی جس سے ابھی چند منٹ پہلے توبہ کی تھی۔۔۔

مم۔۔۔۔مگر پیسے اپنی مرضی کے لوں گی ۔۔۔۔میں خوبصورت ہوں ۔۔۔۔یقین نہ آئے تو وہ وہاں(ابیہا نے کچھ فاصلے پر موجود سٹریٹ لائٹ کی طرف اشارہ کیا )
وہاں روشنی میں لے جا کر دیکھ لو۔۔۔۔وہ پاگلوں کی طرح اشارہ کرتی بولی
ضرار شاہ کو آج اتنے عرصے بعد پھر سے کسی لڑکی پر ترس آیا تھا۔۔۔۔۔۔یا پھر شاید اُس کی بے بسی، بے چارگی پر ترس آیا تھا۔۔۔اسی لیے آہستگی سے مزید قریب ہوا۔۔۔۔۔
بائیں ہاتھ میں پکڑے چیک کو آگے بڑھایا جو وہ آتے ہوئے گاڑی میں موجود چیک بک سے سائن کر کے لایا تھا۔۔
یہ لے لو۔۔۔۔۔جتنے پیسوں کی تمہیں ضرورت ہے اُس سے کہیں زیادہ ہیں۔۔۔۔مگر میری ایک بات یاد رکھنا۔۔۔۔
عورت کی عزت۔۔۔۔۔۔اُسکی نسوانیت۔۔۔۔۔ اتنی ارازاں نہیں ہوتی کہ چند پیسوں کے عوض بیچ دی
جائے۔۔۔۔یہ تو بہت نازک ہوتی ہے جس پر پڑا
ہلکا سا چھینٹا بھی اسکی ساری زندگی برباد کر دیتا ہے۔۔۔۔اور جو عورتیں اپنے ہاتھوں اپنی عزت بیچتیں ہیں وہ ۔۔۔۔۔۔پھر وہ خود کو عورت کہلوانے کی حقدار نہیں۔۔۔۔۔
ضرار نے اُسے اپنی طرف حیرانگی سے دیکھتے پا کر آہستگی سے اُسکا ہاتھ پکڑا اور چیک تھما کر واپس مُڑ گیا۔۔۔۔۔۔۔۔
ابیہا منہ کھولے اُسے تب تک دیکھتی رہی جب تک وہ نظروں سے اوجھل نہیں ہو گیا۔
………………………………………

سیمل پنجاب یونیورسٹی میں بی ایس کیمسٹری کی اسٹوڈینٹ تھی۔۔۔۔
اس وقت وہ اور اسکی چند کلاس فیلوز کیمسٹری لیب میں موجود مختلف کیمیکلز کے تجربات کر رہیں تھیں۔۔۔۔۔
یونیورسٹی میں چند دن پہلے آکسفورڈ یونیورسٹی کے کچھ اسٹوڈینٹس کسی سروے کے سلسلے میں پاکستان آئے تھے۔۔۔۔۔۔
ان اسٹوڈینٹس میں ضرارشاہ بھی شامل تھا۔۔۔

ضرارشاہ اپنی بائیس سالہ زندگی میں دوسری دفعہ پاکستان آیا تھا۔۔۔۔پہلی دفعہ پندرہ سال کی عمر میں عالم شاہ(باپ)کے ایکسیڈینٹ پر صرف ایک ہفتے کے لیے اور دوسری بار اب۔۔۔۔۔

اس لیے اب وہ پاکستان بلکہ لاہور کو ان چند
دنوں میں اچھی طرح سے دیکھ لینا چاہتا تھا۔۔۔۔اور اس کام کی شروعات وہ یونیورسٹی سے کر چکا تھا۔۔۔۔
آج اسُنے مختلف ڈیپارٹمینٹس کا وزٹ کیا تھا اور
اب تھکن سے چور ہوسٹل کی طرف بڑھ رہا تھا کہ اچانک اسکی نظر کیمسٹری لیب کے بورڈ پر پڑی۔۔۔۔۔اسنے اپنے قدم ہوسٹل کی بجائے اسطرف موڑ
دیے۔۔
اب وہ لیب جا رہا تھا۔۔





Continued........

     3قسط نمبر


0/Post a Comment/Comments

Please Do Not Enter Any Spam Link In THe Comment box.

Previous Post Next Post