Kisi Meharban Na Aakey Last Ep No 14 | Urdu Novels

Kisi Meharban Na Aakey Last Ep No 14 | Urdu Novels


کسی مہربان نے آکےاز قلم ماہ وش چوہدری
قسط نمبر 14
آخری قسط


ابیہا ٹہل ٹہل کر تھک چکی تھی مگر ابھی تک ضرار واپس نہیں آیا تھا۔۔۔
وہ ٹیرس پر موجود چیئر پر پاؤں اوپر رکھ کر بیٹھی اور خود کے گرد شال اوڑھی۔۔۔آج کل موسم بھی کچھ سرد ہو چکا تھا۔۔۔
کب ابیہا کی آنکھ لگی اُسے پتا ہی نہ چلا اور وہ وہیں بیٹھے بیٹھے ہی سو گئی
……………………………………………………………
ضرار تھکا تھکا سا واپس آیا تو ابیہا کمرے میں موجود نہ تھی۔۔۔۔
اس نے حیرت سے کلاک دیکھا جو رات کے بارہ بجا رہا تھا
ابیہا۔۔۔ابیہا۔۔۔۔ پکارتا وہ واش روم ،اسٹڈی چیک کر چکا تھا مگر ابیہا وہاں نہ تھی
ضرار پریشان ہوتا کمرے سے باہر آیا تاکہ کیچن میں چیک کرے مگر سیڑھیاں اُترتے اسکی نظر سامنے ٹیرس پر پڑی
وہ جلدی سے اس طرف لپکا ۔۔۔۔ابیہا کو وہاں دیکھ کر اسکی سانس میں سانس آئی
وہ چئیر پر بیٹھی سو رہی تھی۔۔۔۔ضرار کو بے اختیار اُس پر پیار آیا۔۔۔۔۔
اُس نے بہت احتیاط سے ابیہا کے وجود کو بازؤں میں بھرا اور بیڈ روم کی طرف چلا گیا۔۔۔۔
ضرار نے اُسے بیڈ پر لیٹا کر کمبل اوڑھایا اور اسکے ماتھے سے بال ہٹائے۔۔۔۔
اب وہ بہت فرصت اور توجہ سے اس کے نقوش ازبر کر رہا تھا۔۔۔۔جو اُسے اتنے کم وقت میں اتنی عزیز ہو گئی تھی کہ وہ خود ہی اُسے خفا کر کے سکون سے رہ نہیں پا رہا
تھا۔۔۔۔
جادوگرنی۔۔۔۔ضرار مسکرا کر کہتا جھکا
اور آہستگی سے ہونٹ اُسکے ماتھے پر رکھے
وہ پیچھے ہٹا ہی تھا کہ ابیہا نے دوسری طرف کروٹ بدل لی۔۔۔
ضرار کو اُسکی گردن پر موجود تل پھر سے گستاخی پر اُکسا رہا تھا
ضبط کے باوجود وہ خود پر کنٹرول نہیں کر سکا اور آہستگی سے نیچے بیٹھ کر اُسکے بال پیچھے کیے
اب وہ اپنے لب اسکی گردن کے تل پر رکھ چکا تھا۔۔۔ایک بار۔۔۔۔دو بار۔۔۔۔تین بار
ابیہا کسمسائی۔۔۔۔
ضرار بریک پر پاؤں رکھتا پیچھے ہٹا اور اُس پر کمبل ٹھیک کرتا لائٹ آف کر کے ڈریسنگ روم میں چلا گیا۔۔۔۔
……………………………………………………………
صبح فجر کے وقت ابیہا کی آنکھ کھلی تو خود کو بیڈ پر پایا
میں تو ٹیرس پر تھی پھر یہاں کیسے؟؟۔۔۔اس نے بیٹھ کر دائیں جانب دیکھا تو ضرار سو رہا تھا۔۔۔
اوہ۔۔۔یہ کب آئے۔۔۔مجھے بھی یہی لائے ہوں گے۔۔۔۔ابیہا نے بالوں کا جوڑا باندھا اور وضو کرنے چل دی۔۔
……………………………………………………………
وہ نماز پڑھ کر واپس آئی تو۔۔۔۔ضرار اسکی طرف ہی کروٹ لیے سویا ہوا تھا
ابیہا نے لیمپ کی مدھم لائٹ میں ضرار کا چہرہ دیکھا
اونہہ۔۔۔۔سوتے ہوئے کتنا معصوم لگ رہا ہے یوں جیسے۔۔۔۔وہ مسکرائی
ویسے ہے تو ہینڈسم۔۔۔۔شاید اسی لیے اتنا مغرور ہے۔۔۔نک چڑھا۔۔۔۔
ابیہا نے اُسکے بھورے بالوں کو ماتھے سے ہٹایا جو الُجھے ہوئے آنکھوں تک آ رہے تھے
کھڑوس۔۔۔۔وہ بڑبڑائی
کون۔۔۔۔۔؟؟؟ضرار نے پٹ سے آنکھیں کھول دیں
آپ جاگ رہے ہیں۔۔۔۔وہ پیچھے ہوئی
تم نے جگا دیا۔۔۔۔وہ تکیہ سیٹ کرتا تھوڑا اٹھ بیٹھا
میں نے کب جگایا۔۔۔۔وہ حیران ہوئی
ابھی جب چھو رہی تھی مجھے۔۔۔
استغفرواللّہ۔۔۔۔کب چھوا میں نے ۔۔۔۔ابیہا کو اسکی بات پر جھٹکا لگا
ابھی میرے بال کون سنورا رہا تھا ۔۔۔۔ضرار نے مسکرا کر پوچھا
بال سنوارنے میں اور پیچھے کرنے میں فرق ہے ضرار صاحب اور اسے چھونا نہیں کہتے ۔۔۔
پھر چھونا کسے کہتے ہیں۔۔۔۔۔وہ شرارت آمیز معصومیت سے بولا
میں آپ سے ناراض تھی اس لیے مجھ سے بات مت کریں۔۔۔۔ابیہا کو اچانک یاد آیا ناراضگی کا
اُسکی بات پر ضرار کا قہقہ بلند ہوا
ہنس کیوں رہے ہیں۔۔۔۔؟؟؟میں نے کوئی جوک سُنایا ہے کیا۔۔۔؟؟۔۔۔وہ چڑی
نہیں ایسے ہی بس تمہاری شکل دیکھ کر ہنسی آ گئی
میری شکل دیکھ کر اور خود۔۔۔خود تو بڑے خوبصورت ہیں جو مجھے دیکھ کر ہنسی آئی۔۔۔۔وہ تپی
نہیں خوبصورت۔۔۔۔
رتی بھر بھی نہیں۔۔۔
غور سے دیکھو۔۔۔۔۔۔
دیکھ چکی ہوں۔۔۔۔بس قابل قبول سی صورت ہے۔۔۔۔
رئیلی۔۔۔۔۔۔؟؟؟
رئیلی۔۔۔۔۔ابیہا نے اسی کے انداز میں کہہ کر کمبل میں منہ چھپا لیا
اپنا تھوبڑا کیوں چھپا لیا دیکھنے تو دو کہ یہ قابل قبول ہے بھی کہ نہیں۔۔۔۔وہ شرارت سے کہتا اس کا کمبل ہٹا چکا تھا
کیا بدتمیزی ہے یہ۔۔۔۔۔وہ چیخی
بدتمیزی نہیں ہے یار میں تو۔۔۔۔
ضرار مجھے سونے دیں
ابھی سو کر ہی اٹھی ہو۔۔۔۔
مجھے پھر سونا ہے
مگر میں سونے نہیں دوں گا اب۔۔۔۔
مسلہ کیا آپ کا۔۔۔۔۔؟؟؟وہ چڑی
صلح کر لو مجھ سے پکی والی یہی مسلہ ہے میرا۔۔۔
پکی والی صلح کیا ہوتی ہے۔۔۔۔وہ حیرت سے بولی
ابھی بتاتا ہوں۔۔۔۔۔ضرار نے اسے اپنی طرف کھینچا
ضرار ۔۔۔۔۔ضرار یہ کیا کر رہے ہیں
پکی والی صلح۔۔۔۔ضرار اسے مکمل قبضے میں لے چکا تھا
صلح کرنے کا یہ کونسا طریقہ ہے۔۔۔۔؟؟؟وہ حیران ہوئی
یہ میرا طریقہ ہے۔۔۔۔
انتہائی واہیات طریقہ ہے۔۔۔۔اب آپ کی بہتری اسی میں ہے کہ مجھے صیح سلامت چھوڑ دیں ورنہ۔۔۔۔ابیہا نے دھمکی ادھوری چھوڑی
ورنہ کیا۔۔۔۔وہ محظوظ ہوتا مسکرایا
ورنہ۔۔۔۔۔۔۔ورنہ۔۔۔۔پہلے مجھے چھوڑیں پھر بتاتی ہوں۔۔۔۔
اتنا بیوقوف نہیں ہوں سینے سے لگی اتنی خوبصورت لڑکی کو چھوڑ دوں۔۔۔۔ضرار نے اسے مزید بھینچا
ضرار کیا ہے آپ کو کہیں پی کر تو نہیں سوئے تھے۔۔۔۔۔وہ مشکوک ہوئی
قسم لے لو اب تو چھوڑ دی ہے۔۔۔۔
اچھا کیا۔۔۔۔اب ذرا مجھے بھی چھوڑ دیں۔۔۔مہربانی ہو گی۔۔۔وہ گھوم پھر کر وہیں آئی
چھوڑ دوں گا پہلے بتاؤ معاف کر دیا مجھے۔۔۔صلح ہے ناں اب ہماری۔۔۔؟؟؟
صلح ہے۔۔۔۔۔وہ ہاری
پکی والی۔۔۔۔؟؟؟
پکی والی۔۔۔۔
ہمیشہ کے لیے۔۔۔۔۔؟؟؟
بلکل۔۔۔۔۔
اب خفا نہیں ہو گی۔۔۔۔؟؟؟
نہیں ہوں گی۔۔۔اب بس کریں۔۔۔اور چھوڑیں مجھے میرا سانس رک رہا ہے
یہ لو چھوڑ دیا۔۔۔۔ضرار نے اُسکے لبوں پر اپنے لب رکھ کر ہاتھ ہٹا دیے۔۔
ہوں۔۔۔۔ضرار۔۔۔وہ بمشکل بولتی پیچھے ہٹی
بہت ہی فضول ہیں آپ تو۔۔۔ابیہا سرخ پڑتی
چہرہ کمبل میں چھپا گئی۔
ضرار اُسکے چھپنے پر مسکرا دیا
………………………………………………………………
آج کی رات مجھے آپ سے بہت سے وعدے لینے ہیں ضرار۔۔۔۔۔ابیہا نے اسکے سینے پر سر رکھ کے کہا
لے لو جو بھی لینا ہے جان من اب تو سب کچھ تمہارا ہی ہے۔۔۔۔وہ اسکے بالوں میں انگلیاں پھیرتا بولا
ضرار آپ ساری نمازیں پڑھا کریں گے۔۔۔۔۔۔اور شراب کو ہمیشہ کے لیے چھوڑ دیں گے اور مجھے ہنی مون کی بجائے عمرے پر لے کے جائیں گے
بلکل کروں گا سب۔۔۔۔وہ مسکرایا
وعدہ۔۔۔۔۔
وعدہ۔۔۔۔۔ضرار نے اسکے ماتھے کا بوسہ لیا
ضرار آپ بہت اچھے ہیں ۔۔۔۔۔وہ مسکرائی
مگر تم سے کم۔۔۔۔۔۔پتہ ہے بیا۔۔۔۔تم میری زندگی میں بہار بن کر آئی ہو۔۔۔۔۔سیمل کے بعد مجھے سب لڑکیوں سے نفرت ہو گئی تھی مجھے لگتا تھا سب لڑکیاں ایک جیسی ہوتی ہیں مگر تم نے میرا یہ نظریہ غلط ثابت کیا۔۔۔۔۔۔گو کے ہماری پہلی ملاقات بھی اچھی سچویشن میں نہیں ہوئی تھی مگر تم نے پروو کیا کہ تم بہت اچھی ہو۔۔۔۔۔اور جانتی ہو۔۔۔۔۔۔وہ رکا
کیا۔۔۔۔۔۔؟؟؟
تم وہ پہلی لڑکی ہو جو مجھے صورت اور سیرت دونوں سے بھا گئی ہو اور۔۔۔۔اور مجھے لگتا ہے مجھے تم سے محبت سی ہو گئی ہے۔۔۔۔
ابیہا اسکی بات پر مسکرا دی
صرف لگتا ہے۔۔۔۔؟؟
نہیں اب تو ہو ہی گئی ہے۔۔۔۔۔وہ مسکرا کر کہتا اسے حصار میں لے چکا تھا
ضرار یہ کیا کر رہے ہیں۔۔۔۔۔وہ اسکی گستاخیوں پر کنفیوز ہوئی
اسے پیار کہتے ہیں جناب اور اب تو ۔۔۔
ابیہا نے اسکے منہ پر ہاتھ رکھا
ارے یار ۔۔۔۔ہر گز نہیں کم از کم آج تو راہ فرار نہیں ملے گی جتنا مرضی زور لگا لو۔۔۔۔ضرار نے اسے ہاتھ پاؤں مارتے دیکھ کر کہا
آپ بہت برے ہیں ضرار ہیں۔۔۔۔۔وہ خفا ہوئی
میں برا ہی ٹھیک ہوں۔۔۔۔۔۔ڈئیر وائف۔۔۔۔ضرار نے ہنستے ہوئے لائٹ آف کی
,۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ضرار کہاں ہیں آپ۔۔۔۔میں نے آپ کو آج جلدی آنے کو کہا تھا
آ رہا ہوں یار راستے میں ہوں۔۔۔۔ کافی ٹریفک ہے اسلئیے لیٹ ہو گیا۔۔۔۔۔وہ ہارن پے ہاتھ رکھتا بولا
میں انتظار کر رہی ہوں۔۔۔جلدی آئیں۔۔۔
اوکے سویٹ ہارٹ۔۔۔کمنگ۔۔۔۔۔ضرار نے مسکرا کر کال بند کی
ابیہا نے نیہا کا نمبر ملایا اور اُس سے بات کر کے ٹائم پاس کرنے لگی
اچھا بتاؤ کیا کر رہی ہو۔۔۔۔؟؟نیہا نے سلام دعا کے بعد پوچھا
کچھ نہیں بس ضرار کا انتظار کر رہی تھی
بیا تم کسی دن ضرار بھائی کے ساتھ ہماری طرف آنا پلیز۔۔۔۔شادی کے بعد وہ ایک دفعہ بھی مجھ سے ملنے نہیں آئے
کوئی نہیں۔۔۔۔۔میں خود تو اتنی دفعہ تمہاری طرف آ چکی ہوں اور تم خود ایک بار بھی نہیں آئی
اس لیے اب جب بھی آنا ہوا تم لوگ ہی آؤ گے ۔۔۔میں نہیں۔۔۔۔ابیہا نے صاف انکار کیا
اچھا بابا آئیں گے ہم ہی آئیں گے اب۔۔۔۔نیہا مسکرا دی
ہاں آنے سے پہلے بتا دینا بلکہ میں خود ہی انوائیٹ کر لوں گی کسی دن۔۔۔۔اچھا نیہا ضرار آ گئے ہیں پھر بات کرتے ہیں۔۔۔اپنا خیال رکھنا ہاں۔۔۔
اوکے جی۔۔۔۔۔۔۔خدا حافظ
نیہا نے مسکرا کر فون بند کر دیا
……………………………………………………
اسلام و علیکم۔۔۔۔ضرار نے مسکرا کر اُسے ساتھ لگایا
اتنی دیر لگا دی۔۔۔۔ابیہا نے اس کا کوٹ اتارتے ہوئے پوچھا
ہاں یار ٹریفک بہت تھی یوں جیسے سارا اسلام آباد نکل آیا ہو۔۔
اچھا آپ جلدی سے چینج کریں میں چائے لاتی ہوں۔۔۔۔پھر چلتے ہیں۔۔
ارے یار۔۔۔۔تھک گیا ہوں۔۔۔۔اور اس وقت چائے کیساتھ صرف تمہارا دیدار کرنا چاہتا ہوں۔۔۔۔یہ پروگرام پھر کسی دن پر رکھ لیتے ہیں۔۔۔۔وہ بات کرتا کبڈ کے پاس ابیہا کے دونوں ہاتھ تھام چکا تھا
اچھا بابا پھر چلیں گے مگر میرے ہاتھ چھوڑیں میں چائے بنانے جا رہی تھی۔۔۔
اوہ ہ ہ یسس۔۔۔۔۔ضرار پیچھے ہٹا
ابیہا مسکراتی ہوئی باہر نکل گئی
……………………………………………………
دن بہت اچھے گزر رہے تھے۔۔۔۔اور ابیہا بھی بہت خوش تھی ضرار کی اتنی اچھی تبدیلی دیکھ کر وہ جب بھی گھر پر ہوتا نماز قریبی مسجد میں جا کر ادا کرتا تھا۔۔۔۔۔اب بھی وہ مغرب کی نماز پڑھنے ہی گیا تھا
ابیہا بھی نماز پڑھ کر ٹیرس پر آ گئی۔۔
کیا ہو رہا ہے بھئی۔۔۔۔۔ضرار نماز پڑھ کر وہیں ٹیرس پر آیا
کچھ نہیں بس واک کر رہی تھی۔۔۔وہ مسکرائی
تم ہر وقت مجھے ادھر أدھر ہی نظر آتی ہو یار ریسٹ بھی کر لیا کرو کچھ۔۔۔وہ فکر مند ہوا
آپ کے آفس جانے کے بعد ریسٹ ہی تو کرتی ہوں سارا دن۔۔۔۔اور ویسے بھی۔۔۔۔
ضرار کے سیل کی ٹون نے ابیہا کی بات کاٹی۔۔۔۔۔
اسلام وعلیکم۔۔۔۔۔۔۔اماں جان کیسی ہیں۔۔۔۔ضرار نے مسکرا کر پوچھا
میں ٹھیک ہوں میری جان۔۔۔تم بتاؤ کیسے ہو دونوں اور کب آؤ گے حویلی۔۔۔۔میں روز راہ دیکھتی ہوں تم لوگوں کی۔۔۔۔
اماں جان کل شام میں آ رہے ہیں ہم آپ کے پاس۔۔۔۔۔ضرار نے پیچھے سے ابیہا کو حصار میں لے کر تھوڑی اسکے کندھے پر رکھی
اگلے دو دن آپ کے ساتھ گزاریں گے پھر چوتھے دن ہماری فلائٹ ہے۔۔۔۔۔
ابیہا نے فلائٹ پر حیرانگی سے ضرار کیطرف گردن گھمائی
فلائٹ ۔۔۔۔کدھر جارہے ہو۔۔۔۔اماں جان بھی حیران ہوئیں
اماں جان آپکی نواسی کو عمرے پر لے جا رہا ہوں۔۔۔
سچ۔۔۔۔۔یہ تو بہت اچھی خبر سنائی تم نے خدا خوش رکھے میرے بچوں کو۔۔۔۔۔اماں جان خوش ہوئیں
ابھی تو ایک اور اچھی خبر سنانی ہے آپ کو۔۔۔۔۔۔ضرار نے ابیہا کی گال سے گال رگڑ کر آنکھ ماری
ابیہا اسے ہی گھور رہی تھی۔۔۔۔
بول بھی ضرار کیا خبر ہے۔۔۔۔چپ کیوں ہو گیا

اماں جان پردادی بننے والی ہیں آپ۔۔۔۔ضرار نے دوسری اچھی خبر سنائی
یا میرےمالک تیرا لاکھ لاکھ شکر ہے اس خبر کا تو کب سے انتظار کر رہی تھی میں۔۔۔۔میرے بچے سلامت رہیں۔۔۔۔ سدا خوش رہو۔۔۔۔بیا کدھر ہے بات کروا میری ذرا۔۔۔۔۔۔
یہ لیں کیجئیے۔۔۔۔۔ضرار نے سیل بلش کرتی ابیہا کو تھمایا
اسلام وعلیکم اماں جان۔۔۔۔
واعلیکم سلام۔۔۔۔میری بچی خوش رہو۔۔۔۔بہت بہت مبارک ہو۔۔۔خدا خیر سے یہ دن دیکھائے۔۔۔۔دل خوش کر دیا ہے۔۔۔۔سدا سہاگن رہ میری بچی۔۔۔۔۔اپنا خیال رکھنا ہے ۔۔۔بلکہ میں یہاں سے ملازمہ بھیجوں گی تیرا خیال رکھنے کے لیے۔۔۔۔اماں جان خوشی خوشی بولیں
جی اماں جان۔۔۔۔ابیہا شرمائی شرمائی سی منمنائی
ضرار اسکے بلش کرتے گالوں کو دیکھ کر محظوظ ہو رہا تھا
ضرار بتا رہا تھا کل حویلی آ رہے ہو تم لوگ اور پھر عمرہ کرنے جا رہے ہو۔۔۔؟؟
جی اماں جان۔۔۔۔۔
چلو اچھی بات ہے۔۔۔۔۔میرے بچے خوش ہیں مجھے اور کیا چاہیے۔۔۔۔اب اپنا خیال رکھنا ہے باقی باتیں کل ہوں گی۔۔۔خدا حافظ
خدا حافظ۔۔۔۔ابیہا نے کال آف کی
کیا کہہ رہی تھیں۔۔۔؟؟؟
کچھ نہیں خیال رکھنے کا کہہ رہی تھیں اچھا میں ذرا کھانا لگواؤں بھوک لگ گئی ہے۔۔۔۔ابیہا مڑی
ارے یار ابھی کچھ دیر مجھے تو کمپنی دے دو ۔۔۔
مجھے بھوک لگی ہے ضرار پہلے کھانا کھاتے ہیں پھر آپکی کلاس لوں گی میں۔۔۔۔
کلاس۔۔۔۔کیسی کلاس۔۔۔؟؟؟وہ حیران ہوا
مجھے بتایا بھی نہیں اور عمرے کے ٹکٹس بک کروا لیے
اوہ۔۔۔ایکچوئلی میں سرپرائز دینا چاہتا تھا یار اور ویسے بھی پھر ڈاکٹرز تمہیں کمپلیٹ ریسٹ کا کہہ دے گی۔۔۔اس لیے میں نے سوچا تمہاری یہ خواہش بھی پوری کر ہی دوں۔۔۔وہ مسکرایا
اچھا کیا۔۔۔۔وہ بھی مسکرائی
مبارک تو دے دو یار۔۔۔۔عمرے پر جانے کی۔۔۔۔
اوہ۔۔۔۔مسٹر ضرار شاہ صاحب آپ کو بہت مبارک ہو۔۔۔۔۔ابیہا نے وہیں سے پلٹ کر کہا
ایسے نہیں۔۔۔۔۔۔
تو پھر کیسے۔۔۔۔؟؟؟
ایسے۔۔۔۔۔ضرار نے بازو پھیلائے
ایویں ایسے۔۔۔۔وہ بلش ہوئی
میں تمہاری ہر بات مانتا ہوں یار اور تم مجھ معصوم کی چھوٹی سی بات نہیں مان سکتی۔۔۔۔وہ معصومیت سے بولا
کہہ تو وہ سچ ہی رہا تھا۔۔۔
ابیہا شرماتی ہوئی ضرار کی پھیلی بانہوں میں سمائی۔۔۔
گانگریجولیشنز اینڈ تھینک یو فار دس پلیزنٹ۔۔۔۔۔وہ مدھم سا بولی
سیم ٹو یو مائی لائف۔۔۔۔۔ضرار نے مسکرا کر لب اسکے ماتھے پر رکھ دیے
……………………………………………………………

چند ماہ بعد 👉👉👉

ضرار میری جان بیٹھ جا یہاں آ کر۔۔۔۔فکر نہ کر رب سونا خیر سے خوشی دیکھائے گا۔۔۔۔اماں جان نے گائنی وارڈ میں بے چینی سے ٹہلتے ضرار سے کہا
جو پیچھلے پچیس منٹ سے پریشان سا ادھر أدھر ٹہل رہا تھا
اماں جان کی بات پر آہستگی سے سر ہلاتا انکی ساتھ والی چئیر پر بیٹھا
فکر نہ کر اللہ سب اچھا کرے گا ہونں۔۔۔۔اماں جان نے ضرار کے جھکے سر پر ہاتھ پھیرا
جی۔۔۔۔۔وہ مدھم سا بولا
فکر کیسے نہ ہوتی اندر اسکی زندگی ، اسکی متاع حیات ایک نئی زندگی کو جنم دینے کے لیے زندگی اور موت کی جنگ لڑ رہی تھی۔۔۔۔اسکا رواں رواں ابیہا کے لیے دعا گو تھا۔۔۔
مزید پندرہ منٹ بعد ڈاکٹر شہلا گلوز اتارتی باہر آئی
ضرار ایک منٹ کا فاصلہ ایک سیکنڈ میں طے کر کے ڈاکٹر تک پہنچا
ڈاکٹر شہلا ضرار کے اڑے حواس دیکھ کر مسکرائیں
گانگریجولیشنز مسٹر ضرار۔۔۔۔اللہ بلیسڈ یو وڈ آ پریٹی ڈول۔۔۔۔۔وہ مسکرائی
ابیہا۔۔۔۔۔مائی وائف۔۔۔۔؟؟وہ فورا بولا
شی از آلسو فائن۔۔۔۔
اوہ۔۔۔تھینکس۔۔۔۔ضرار پرسکون سانس خارج کرتا مسکرایا
ابھی کچھ دیر میں ہم بے بی اور آپکی مسز کو روم میں شفٹ کر دیں گے۔۔۔۔پھر آپ لوگ مل سکتے ہیں۔۔۔۔ڈاکٹر شہلا مسکراتیں ہوئی دائیں جانب مڑ گئی
اماں جان۔۔۔۔۔ضرار نے اماں جان کے قدموں میں بیٹھ کر انکے ہاتھ چومے
اماں جان۔۔۔۔میں۔۔۔۔میں بیٹی کا باپ بن چکا ہوں۔۔۔۔وہ فرط جزبات سے پانی سے بھری آنکھوں کیساتھ بولا
یا میرے مالک تیرا لاکھ لاکھ شکر ہے۔۔۔۔۔تو نے میری زندگی میں مجھے یہ دن دکھایا۔۔۔بہت بہت مبارک ہو میری جان ۔۔۔۔اماں جان نے اسکے ماتھے پر بوسہ دیا
تھینکس۔۔۔۔سویٹ گرل۔۔۔۔وہ شرارت سے کہتا اٹھ کر باپ کے گلے لگا
گانگریجولیشنز مائی سن۔۔۔۔۔عالم شاہ نے اسکا کندھا تھپکا
تھینکس ڈیڈ۔۔۔۔آئی ایم سو ہیپی فار دس بلیسنگ
می ٹو ڈئیر۔۔۔خوش رہو۔۔۔۔عالم شاہ مسکرائے
اتنے میں نرس نے ابیہا کو روم میں شفٹ کرنے کا بتایا
اوکے ڈیڈ آپ لوگ چلیں۔۔۔۔میں آتا ہوں ابھی۔۔۔وہ باہر کی جانب بڑھا
ضرار کدھر جا رہے ہو۔۔۔۔پتر اپنی بیوی اور بچی کو دیکھتے جاؤ۔۔۔۔اماں جان نے آواز دی
اماں جان۔۔۔آپ چلیں دیکھیں چل کر میں نوافل پڑھ کر جوائن کرتا ہوں آپ کو۔۔۔
چل ٹھیک ہے جا شاباش۔۔۔۔۔اماں جان اسکی بات پر مسرور سا مسکرائیں
دیکھا عالم تو نے میرا انتخاب۔۔۔۔وہ فخر سے بولیں
جی اماں جان۔۔۔۔میں بھی بہت خوش ہوں ضرار کی اتنی اچھی تبدیلی سے اور اسکا کریڈٹ آپ کی نواسی کو ہی جاتا ہے۔۔۔۔وہ مسکرائے
اب چلیں۔۔۔۔۔میں بھی اپنی پوتی کو دیکھ لوں۔۔۔پہلی دفعہ دادا بنا ہوں۔۔۔۔وہ شوخی سے بولے
ہاں۔۔۔ہاں چل اور ذرا حویلی میں بھی فون کر کے خوش خبری سنا دے۔۔۔۔سب انتظار میں ہونگے
جی میں کرتا ہوں۔۔۔۔۔عالم شاہ اماں جان کو لے کر ابیہا کے روم کیطرف بڑھے
….……………………………………………........…
ضرار آدھے گھنٹے بعد روم میں داخل ہوا۔۔۔۔
نرس ابیہا کو سوپ پلا رہی تھی جبکہ کمبل میں لپٹی ڈول اماں جان کی گود میں تھی
وہ مسکراتا ہوا اماں جان کے پاس آیا۔۔۔۔انہوں نے بچی ضرار کو تھمائی
ضرار نے بہت احتیاط سے تھام کر اسکے ماتھے پر لب رکھے
ہاؤ کیوٹ۔۔۔۔مائی ڈول۔۔۔۔وہ مسکرایا
ہاں ماشا اللہ بہت پیاری ہے۔۔۔۔خدا نصیب بھی اچھے کرے
آمین۔۔۔۔۔
اچھا میں عالم کیساتھ گھر جا رہی ہوں۔۔۔ذرا کمر سیدھی کر لوں۔۔۔شام میں آؤں گی پھر۔۔
نہیں اماں جان آپ گھر جا کر ریسٹ کریں۔۔۔میں ہوں یہاں۔۔۔ٹینشن مت لیں۔۔۔
چل ٹھیک ہے پھر خیال رکھنا بیا کا۔۔۔اماں جان نے تاکید کی اور ابیہا سے مل کر عالم شاہ کیساتھ ضرار پیلس چلیں گئیں
نرس بھی ابیہا کو سوپ پلا کر جا چکی تھی

اب کمرے میں وہ دونوں ہی تھے۔۔۔۔ابیہا نے حیرت سے ضرار کو دیکھا جو پیچھلے پندرہ منٹ سے اسے اگنور کیے اپنی بیٹی کیساتھ بزی تھا
مزید دس منٹ کے بعد وہ بول ہی پڑی
میں بھی ہوں یہاں۔۔۔۔۔وہ آہستگی سے بولی
کچھ کہا تم نے۔۔۔۔؟؟؟ضرار چونکا
میں بھی یہاں موجود ہوں۔۔۔۔۔وہ خفا سی بولی
اوہ۔۔۔۔۔یس تم بھی ہو یہاں میں تو بھول ہی گیا تھا تمہیں۔۔۔۔۔ضرار شرارت سے کہتا اسکی طرف آیا
ابھی تو آج آئی ہے آپکی بیٹی اور آپ اتنی جلدی مجھے بھول بھی گئے۔۔۔۔وہ نقاہت سے بولی
اوہ مائی لائف۔۔۔۔۔ضرار شاہ سانس لینا تو بھول سکتا ہے مگر۔۔۔۔اپنی زندگی کو اپنے جینے کیوجہ کو کیسے بھول سکتا ہے۔۔۔میری جان۔۔۔۔اس نے جھک کر ابیہا کے ماتھے پر لب رکھے
تھینکس فار دس پریشیئس گفٹ۔۔۔اس نے کمبل میں لپٹی ڈول کے گال چومے اور اسے ابیہا کی طرف نیچے کو کیا
لوک ایٹ دس۔۔۔۔مائی ڈول۔۔۔۔مائی پروؤاڈ۔۔۔۔وہ مسکراتا ہوا ابیہا کے بستر پر بیٹھا
پیاری ہے ناں۔۔۔۔۔؟؟؟
بہت۔۔۔۔۔
مجھ سے زیادہ۔۔۔۔؟؟؟
تھوڑی۔۔۔۔ی۔۔۔۔ی سی۔۔۔۔۔وہ شرارت سے بولا
سچ میں۔۔۔۔وہ حیران ہوئی
میں جھوٹ نہیں بولتا۔۔۔۔
مگر سچ بھی بہت کڑوا بولتے ہیں۔۔۔۔
تم جیلس ہو رہی ہو میری بیٹی سے۔۔۔۔؟؟؟
میں کیوں جیلس ہوں گی۔۔۔۔یہ میری بھی بیٹی ہے۔۔۔۔وہ خفگی سے بولی
اچھااااا حیرت ہے۔۔۔۔میری بیٹی تمہاری بیٹی کیسے ہوئی۔۔۔۔؟؟
ضرار۔۔۔۔۔تنگ مت کریں
ضرار نے قہقہ لگایا۔۔۔۔اوکے جناب جو حکم۔۔۔۔ہم تو پہلے بھی آپ کے غلام تھے اور اب بھی ہیں۔۔۔۔۔وہ آگے کو جھکا
ضرار آپ کہہ رہے تھے اگر ہماری بیٹی ہوئی تو ہم اسکا نام جنت رکھیں گے۔۔۔یاد ہے آپ کو۔۔۔؟؟؟
بلکل یاد ہے۔۔۔ یہ ہماری جنت ہی تو ہے۔۔۔۔۔ضرار نے پھر سے بچی کے گال چومے
مجھے بھی لینے دیں نا خود ہی اس کا منہ گندا کیے جا رہے ہیں
ضرار نے قہقہہ لگاتے ہوئے اپنے گال ابیہا کے سامنے کیے
لو تم میرا منہ گندا کر دو۔۔۔۔حساب برابر۔۔۔وہ مسکراہٹ دبا کر بولا
ضراااااااررررر۔۔۔۔۔
اوووکے۔۔۔۔۔ضرار نے ہنستے ہوئے جنت کو ابیہا کے قریب کیا
ابیہا نے آنسو بھری آنکھوں سے لب اسکے نرم و ملائم گال پپ رر رکھے
اور رو پڑی۔۔۔۔
اوہ کم آن ڈارلنگ رو کیوں رہی ہو۔۔۔۔وہ جنت کو کاٹ میں لیٹا کر واپس ابیہا کے پاس آیا
یہ۔۔۔۔یہ۔۔۔ایسے ہی خوشی سے۔۔۔۔۔
اونہہ۔۔۔۔میری جان روتے نہیں ہیں
خوشی کے موقعوں پر تو بلکل بھی نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔ مجھے تمہاری ہمیشہ والی سمائل چاہیے
ضرار نے اسکے آنسو پونچھے
کم آن ہنی۔۔۔گیو می آ سمائل پلیز۔۔۔۔۔اس نے ابیہا کے چہرے کو ہاتھوں کے پیالے میں لے کر فرمائش کی
ابیہا مسکرا دی۔۔۔۔
ڈیٹس لائک آ گڈ گرل۔۔۔ضرار اسکے مسکراتے لبوں کو چھو کر پیچھے ہوا
میں آج بہت خوش ہوں بیا۔۔۔۔تم۔۔۔۔تم نے آج مجھے میری لائف کا سب سے بڑا گفٹ دیا ہے۔۔۔۔میں سمجھ نہیں پا رہا میں تمہارے کس کس عمل کا شکریہ ادا کروں
میری زندگی میں شامل ہونے کا۔۔۔۔۔یا پھر۔۔۔۔میری زندگی کو اس دنیا کی جنت بنانے کا۔۔۔۔یاپھر آج اتنا قیمتی تحفہ دینے کا۔۔۔۔ضرار اسکے ڈرپ لگے ہاتھ کو سہلاتا ہوا اسے اسکے احسان گنوا رہا تھا
پتا ہے بیا تم۔۔۔۔۔تم جب سے میری زندگی میں آئی ہو۔۔۔۔مجھے جینے کا مقصد مل گیا ہے۔۔۔۔۔۔مجھے وہ ساری خوشیاں ساری راحتیں مل گئیں ہیں جو میں چاہتا تھا۔۔۔۔میں چاہتا تھا میری زندگی میں ایسی عورت آئے جو تن اور من دونوں سے صرف میری ہو۔۔۔۔صرف میری۔۔۔۔۔۔اور۔۔۔۔اور دیکھو میرے رب نے مجھے تم کو عطا کر کے میری ساری تشنگیوں کو مٹا دیا۔۔۔۔مجھے جینا سیکھا دیا۔۔۔۔۔۔۔اب۔۔۔۔۔اب میں جینا چاہتا ہوں بیا۔۔۔۔تمہارے ساتھ۔۔۔۔۔اپنے بچوں کیساتھ۔۔۔۔۔اپنی آنے والی زندگی کی خوشگوار بہاروں کیساتھ۔۔۔۔۔میں جینا چاہتا ہوں۔۔۔۔۔ضرار نے اسکے ہاتھ کو لبوں سے لگایا
مجھے فخر ہے کہ میرے رب نے مجھے اندھیرے سے نکال کر اجالے میں رکھا اور اس اجالے میں اس نے مجھے دنیا کی بہترین عورت سے نوازا شریک سفر بنا
کر ۔۔۔۔میں صبح شام بھی اس ذات کا شکر ادا کروں تو کم ہے۔۔۔۔اس سب کے بدلے میں جو اس نے مجھے دیا۔۔۔۔۔وہ رکا
اینڈ آئی ایم پراؤڈ آف یو۔۔۔۔مائی لو۔۔۔۔۔۔مچ پراؤڈ۔۔۔۔۔وہ محبت سے کہتا ابیہا کو ہمیشہ سے زیادہ اچھا لگا
ضرار آپ۔۔۔۔آپ بھی۔۔۔۔وہ اتنے خوبصورت اظہار محبت پر روتی ہوئی ضرار کے سینے سے لگ گئی
ضرار نے اسکے گرد بازو پھیلایا اور بڑے پیار سے اسکے بال سہلاتا رہا
ابیہا دل کھول کر رو چکی تو پیچھے ہٹی۔۔۔۔
آئی لو یو۔۔۔۔۔ضرار نے اسکی آنکھوں میں دیکھتے ہوئے سر گوشی کی
ابیہا بلش کرتی نظریں جھکا گئی
اونہہ۔۔۔۔آئی وانا یور ریپلائے۔۔۔۔اس نے ابیہا کی تھوڑی پکر کر منہ اونچا کیا
نن۔۔۔۔نہیں۔۔۔۔وہ ہچکچائی
وائے۔۔۔۔؟؟
می ٹو۔۔۔۔وہ آہستہ سا بولی
واٹ می ٹو۔۔۔۔؟؟؟؟
وہی جو آپ نے کہا
مجھے پورا سننا ہے۔۔۔۔۔۔
آئی لو یو۔۔۔۔۔وہ جلدی سے بولی
کیا کہا۔۔۔۔؟؟؟
آئی لو یو
پھر سے کہو۔۔۔۔
آئی ہیٹ یو مسٹر ڈفر۔۔۔۔۔ابیہا نے اسکے سینے پر مکا مارا
ہاہاہاہا۔۔۔۔۔۔لو یو آ لوٹ مائے لائف۔۔۔۔ضرار نے ہنستے ہوئے اسے سینے سے لگایا

ابیہا نے پرسکون ہو کر آنکھیں میچ لیں۔۔۔۔اس یقین کیساتھ کے اب اسکی زندگی میں بہت سی خوشیاں آنے والی ہیں۔۔۔اس پاک پرودگار کی بدولت جس نے اسے ضرار شاہ جیسا جیون ساتھی عطا کیا۔۔۔۔اسے اپنے حفظ و ایمان میں رکھ کر دانیال ملک جیسے گندگی میں دھنسے ہوس پرست مردوں کی ہوس سے بچا کر عزت بھری زندگی عطا کی۔۔۔۔۔وہ جتنا بھی اس پاک ذات کا شکر ادا کرتی کم تھا۔۔

""لگتا ہے میرا خدا ہے مجھ پے مہرباں
میری زندگی میں تیری موجودگی یونہی تو نہیں""
…………………دی اینڈ………………

 THE END

0/Post a Comment/Comments

Please Do Not Enter Any Spam Link In THe Comment box.

Previous Post Next Post