Mahi Ve Ep no 1 | Urdu Novels

Mahi Ve Ep No 1 | Urdu Novels 


از قلم ماہ وش چوھدری
قسط نمبر 1


دیا۔۔۔۔۔دیا۔۔۔۔۔۔فزا چلاتی ہوئی دیا ، سمن اور اریبہ کی طرف آئی جو یونی گراؤنڈ میں بیٹھیں چغلیوں کیساتھ مونگ پھلی پھانک رہی تھیں
کونسی قیامت آ گئی ہے۔۔۔۔موٹی۔۔۔۔جو یوں چلا رہی ہو۔۔۔
( وہ سب فزا کے فرہبی مائل سراپے کی وجہ سے اسے موٹی موٹی کہہ کر چڑاتیں تھیں)
تم۔۔۔۔۔تم یہاں بیٹھی مزے سے مونگ پھلی ٹھوس رہی ہو اور وہاں تمہارا مجازی خدا وکی لوگوں کے ہاتھوں پٹ رہا ہے۔۔۔۔فزا نے پھولے سانس کے دوران بات مکمل کی
اچھاااا۔۔۔۔۔۔۔۔دیا مسکرائی
ڈفر میں مذاق نہیں کر رہی وہ واقعی مار کھا رہا ہے ان سے۔۔۔۔فزا اس کے ریلیکس انداز پر چڑ کر بولی
یہ کو نسا نئی بات ہے ڈئیر۔۔۔۔آئے دن وہ اپنی بہنوں کیوجہ سے سب سے پنگے لیتا ہے اور پھر مار کھا کہ دس، پندرہ دن کا بیڈ ریسٹ منا کر پھر سے یونی آ کر نیا پنگا۔۔۔۔اونہہ۔۔۔۔دیا نے ناک سکیڑا
اب ایسی بھی کوئی بات نہیں۔۔۔۔سمن کو اسکی بات پر اختلاف ہوا
تو پھر جاؤ اور بچا لو جا کر اس نکمے کو۔۔۔۔میں جا رہی ہوں گھر بہت ٹائم ہو گیا ہے۔۔۔داجی (دادا) ویٹ کر رہے ہوں گے۔۔۔۔آج میری اور ان کی شطرنج کی بازی تھی
اوکے بائے۔۔۔۔۔وہ بیگ اور بوکس اٹھاتی ان تینوں کے کھلے منہ دیکھ کر ادا سے ہوائی کس اچھالتی پارکنگ کی طرف مڑ گئ۔۔۔۔
انتہائی کمینی ہے یہ۔۔۔ذرا جو اس بیچارے کی پرواہ ہو۔۔۔۔۔سمن کو صدمہ ہوا
چلو ہم دیکھتیں ہیں جا کر کہیں ساری ہڈیاں ہی نہ تڑوا بیٹھے آج تو ہے بھی اکیلا۔۔۔۔۔فزا نے کہا
کیوں اسکے چیلے کہاں ہیں۔۔۔۔؟؟؟
وہ آج چھٹی پر ہیں۔۔۔۔اسی بات کا فائدہ تو اٹھایا ہے وکی لوگوں نے ورنہ کہاں وہ ایسا کرتے۔۔۔۔
اب چل بھی پڑو یا یہیں بکتی رہو گی تم دونوں۔۔۔۔۔اریبہ بھی خاموشی توڑ کر چلائی
ہاں چلو۔۔۔۔۔وہ تینوں لیب کے پیچھلے گراؤنڈ کیطرف چل پڑیں جہاں عبید انصاری
اپنے مخالف گروپ سے پٹ رہا تھا۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہیلو ڈئیر ہزبینڈ۔۔۔۔دیا دھڑام سے اسکے روم کا دروازہ کھول کر اندر داخل ہوئی
تمہیں کسی نے تمیز نہیں سکھائی۔۔۔۔عبید نے گھورتے ہوئے ہمیشہ والا جملہ دہرایا
نہیں۔۔۔۔وہ ببل چباتی عبید کو آگ لگا گئی
کیا کرنے آئی ہو۔۔۔۔؟؟؟
تعزیت۔۔۔۔۔۔
واٹ ۔۔۔۔تعزیت۔۔۔۔پر کس کی۔۔۔؟؟؟؟
تمہاری۔۔۔۔
میری۔۔۔۔؟؟؟؟عبید نے اپنی طرف اشارہ کیا
مسلہ کیا ہے تمہارا دا جی نے کہا تھا ورنہ میری جوتی کو بھی تمہاری پرواہ نہیں سمجھے۔۔۔
اوہ داجی نے تم سے کہا کہ جا کر میری تعزیت کر کے آؤ۔۔۔۔۔وہ ابھی بھی شاکڈ تھا
نہیں۔۔۔۔انہوں نے تو تیمارداری کہا تھا وہ کیا ہے ناں تمہاری شکل دیکھ کر مجھے تعزیت کرنا مناسب لگا۔۔۔۔۔وہ مسکراہٹ دبا کر بولی
کر لی اب جاؤ۔۔۔۔۔
چلی جاؤں گی۔۔۔۔۔پہلے بتاؤ کتنی ہڈیاں ٹوٹیں اور کتنی بچیں۔۔۔وہ آرام سے کہتی ٹانگ پر ٹانگ جما کر چئیر پر بیٹھی
تم جاتی ہو یہاں سے یا پھر۔۔۔۔۔۔
ارے غصہ کیوں کر رہے ہیں سرتاج۔۔۔۔ذرا بتانا پسند کریں گے کہ کس "بہنا" کے لیے پنگا لیا تھا جو یوں اسطرح۔۔۔۔۔۔۔
عب۔۔۔عبید اگر یہ جوتا مجھے ذرا سا بھی ٹچ کیا تو میں تمہارا حشر تو کیا باقی کی بچیں ہڈیاں بھی توڑ دوں گی
نکلو یہاں سے۔۔۔۔ورنہ یہ جوتا تمہیں ٹچ کرنے کا شرف ضرور حاصل کرے گا
میں جا رہی ہوں اسے نیچے رکھو۔۔۔۔دیا نے عبید کے جوتا لہراتے ہاتھ کو دیکھ کر کہا
تم نکلو۔۔۔۔میں رکھ دوں گا۔۔۔۔۔وہ آرام سے بولا
دیا چھپاک سے باہر نکلی۔۔۔۔
عبید نے جوتا رکھا ہی تھا جب وہ دروازے سے گردن اندر ڈال کر بولی
انتہائی کمینے ہو تم۔۔۔۔بیوی پر ہاتھ کی بجائے جوتا اٹھاتے تمہیں شرم نہیں آئی اور اپنی بہنوں کے لیے ہڈیاں تڑوا۔۔۔۔
ٹھک۔۔۔۔ک۔۔۔۔ک۔۔۔۔۔۔کی آواز سے عبید کا پھینکا جوتا دروازے پر لگا مگر دیا بروقت دروازہ بند کر گئی تھی
ڈفر۔۔۔۔۔عبید نے دانت کچکچائے۔۔۔۔یوں جیسے دانتوں تلے دیا کی گردن ہو۔
………………………………………..……………………
داجی (اکرام انصاری) کے دو بیٹے زبیر انصاری اور زیاد انصاری ہیں
زبیر انصاری بڑے جنکے دو بیٹے عبید اور عمیر جبکہ زیاد انصاری کی ایک بیٹی دیا اور بیٹا داؤد ہے
یہ سب لوگ ہنسی خوشی داجی کی سرپرستی میں انصاری ہاؤس میں خوش و خرم زندگی گزار رہے ہیں
سوائے دیا اور عبید کے جو بچپن سے ایک دوسرے کے ازلی دشمن ہیں
انکی دشمنی کے پیش نظر داجی نے ایموشنل بلیک میلنگ کے تھرو دونوں کو ایک سال پہلے نکاح کے بندھن میں باندھ دیا۔
دونوں ایک دوسرے کو نیچا دکھانے، چڑانے اور برابھلا کہنے میں کوئی لحاظ نہیں رکھتے۔۔۔
پہل اور زیادتی اکثر دیا کی ہی جانب سے ہوتی۔۔۔
انصاری ہاؤس کی وہ واحد بیٹی ہے اسلئیے سب کی ہی لاڈلی بھی ہے
اسپیشلی داجی کی۔۔۔۔۔اور عبید اسے داجی کی چمچی کہتا۔۔۔۔
جس پر وہ چڑ کر عبید کے کمرے کی چیزوں کیساتھ کچھ برا کر کے غصہ نکال لیتی
یہ تکرار بچپن سے چلتی آ رہی تھی اور ناجانے کب تک چلنی تھی۔
…………….………………………….……………....…
وہ داجی کیساتھ شطرنج کی بازی لگا رہی تھی جب عبید لڑکھڑاتا ہوا لان میں انکے پاس آیا
اسلام وعلیکم۔۔۔۔داجی
ہونں۔۔۔۔وعلیکم سلام۔۔۔۔کیسے ہو برخودار۔۔۔داجی نے مصروف سے انداز میں پوچھا
ٹھیک ہوں داجی۔۔۔۔۔
تو پھر یونیورسٹی کیوں نہیں جا رہے اگر ٹھیک ہو تو۔۔۔۔۔دیا کی زبان پر کھجلی ہوئی
تم سے مطلب۔۔۔۔؟؟
مطلب ہے تو پوچھ رہی ہوں۔۔۔
اپنے کام سے کام رکھا کرو سمجھی۔۔۔۔وہ غصے سے بولا
اونہہ۔۔۔۔عبید کیسے بات کر رہے ہو میری بیٹی سے
آپکی بیٹی کیسے بات کر رہی ہے یہ نہیں سن رہے آپ۔۔۔۔۔
دیکھا۔۔۔۔دیکھا داجی یہ ایسے ہی بدتمیزی کرتا ہے مجھ سے ۔۔۔میں نے تو صرف یونی نہ جانے کا پوچھا وہ بھی اس لیے کے وہاں سب مجھ سے پوچھتے ہیں اسکا کیوں نہیں آیا۔۔۔۔کیسا ہے اب۔۔۔۔۔اتنی ایمبیرسمنٹ ہوتی ہے مجھے۔۔۔۔
کیوں ایمبیرسمنٹ ہوتی ہے تمہیں۔۔۔میں نے ایسا کیا کیا جو تم۔۔۔۔
عبید ناؤ بی کوائٹ۔۔۔۔۔داجی نے اسے تنبیہہ کی
آپ سب اسکی ناجائز فیور کر کے میرے ساتھ زیادتی کرتے ہیں داجی۔۔۔۔وہ غصے سے کہتا چئیر کو ٹھوکر مارتا مڑ گیا
اونہہ۔۔۔۔۔زیادتی۔۔۔۔دیا استہزائیہ ہنسی
دیا مت تنگ کیا کرو عبید کو۔۔۔۔
اوہ۔۔۔داجی چھوڑیں اسے وہ تو ہے ہی ڈفر۔۔۔۔آپ ہار رہے ہیں متوجہ ہوں ذرا
یہ۔۔۔یہ۔۔۔لگی۔۔۔۔یس۔۔۔۔آئی ہیو ون۔۔۔۔میں جیت گئی داجی۔۔۔۔دیا نے اچھل کر داجی کے گلے میں بانہیں ڈا لیں
یس۔۔۔۔مائی چائلڈ یو ہیو ون۔۔۔۔داجی نے اسکے ہاتھ تھپتھپائے
ہمیشہ کی طرح آج بھی داجی اپنی لاڈلی کے لیے جان بھوج کر ہار گئے تھے
…………………………………………………..……..
عبید لسن۔۔۔۔۔یہ ذرا ٹیکسیشن کا ٹاپک سمجھا دو مجھے سمجھ نہیں آ رہی۔۔۔کل ایویں چھٹی کرلی میں نے۔۔۔۔۔دیا بک اٹھائے عبید کے کمرے میں ایز یوزئیل بنا ناک کیے داخل ہوئی
عبید ایک خونخوار نگاہ ڈال کر پھر سے لیپ ٹاپ پر بزی ہو گیا
تم سے کہہ رہی ہوں۔۔۔۔دو منٹ اگر بہنوں سے چیٹنگ ترک کر دو گے تو قیامت نہیں آ جائے گی
دیا گو فرام ہئیر میرا دماغ خراب مت کرو
میں پہلے سے خراب چیزوں پر وقت ضائع نہیں کرتی۔۔۔۔اس لیے شرافت سے سمجھا دو ورنہ میرا پتا ہی ہے تمہیں۔۔۔۔دیا نے لیپ ٹاپ بند کر کے بک سامنے رکھی
انتہائی منحوس گھڑی تھی جب تم انصاری ہاؤس میں پیدا ہوئی اور اس سے بھی زیادہ منحوس گھڑی تھی جب میں نے نکاح نامے پر سائن کیے۔۔۔۔عبید نے غصے اور صدمے کے ملے جلے تاثرات سے کہا
اب یہ دونوں منحوس گھڑیاں گزر چکی ہیں۔۔۔۔لہذا ماضی کی بجائے مستقبل کا سوچو۔۔۔۔
سوچو ذرا اگر میں فیل ہو گئ تو تمہاری یونی میں کتنی انسلٹ ہو گی کہ عبید انصاری ٹاپر آف دا یونیورسٹی کی نصف بہتر فیل ہو گئی۔۔۔۔اوہ سیڈ۔۔۔۔دیا نے برا سا منہ بنا کر ایموشنل بلیک میلنگ شروع کی
عبید جانتا تھا یہ بلا ایسے پیچھا نہیں چھوڑے گی اس لیے خاموشی سے بک اٹھائی اور ٹاپک سمجھانے لگا
……………………………………………………...……
دسمبر پنجاب میں سخت سردی کا مہینہ ہوتا ہے۔۔۔۔اسئیلے موسم کی مناسبت سے
وہ چاروں بھی کینٹین میں بیٹھیں چائے اور سموسوں سے لطف اندوز ہو رہی تھیں۔۔۔۔
جب عبید اور اسکا گروپ قہقہے لگاتا کینٹین میں اینٹر ہوا
لو آ گئے صاحب بہادر۔۔۔۔دیا نے برا سا منہ بنایا
رہنے دو دیا۔۔۔۔بلاوجہ مت چڑا کرو اتنا اچھا تو ہے بیچارا۔۔۔۔سمن نے عبید کی سائیڈ لی
ہاں کچھ زیادہ ہی بیچارا نہیں۔۔۔۔اونہہ
ناصرف لائق فائق اسٹوڈینٹ ہے بلکہ اسٹڈی سے ہٹ کر بھی اتنا ہینڈسم اور سوفٹ نیچر ہے قسم سے۔۔۔تم تو ایویں ناشکری کرتی ہو۔۔۔۔بیٹھے بیٹھائے اتنا اچھا شوہر جو مل گیا۔۔۔۔
تم فکر نہ کرو میں اپنے اچھے شوہر سے کہہ کر تمہارے لیے بھی کوئی اچھا شوہر ڈھونڈ دوں گی۔۔۔۔دیا نے سموسے کی بڑی سی بائٹ لیتے سمن کو تسلی دی
دیا خدا واسطے کا بیر ہے تمہیں عبید سے۔۔۔۔۔اتنا معصوم تو ہے۔۔۔۔اریبہ نے بھی اسکی طرف داری کی
ہاں۔۔۔ہاں میں ہی بری ہوں بسسس۔۔۔۔دیا نے بدمزا ہو کر سموسہ واپس پلیٹ میں رکھا
ہم تمہیں برا نہیں کہہ رہیں دیا صرف اتنا سمجھا رہی ہیں کہ جو بھی ہے عبید اب تمہارا شوہر ہے اور ہے بھی بہت اچھا مگر سب تو اچھے نہیں ہوتے ناں۔۔۔۔۔اس لیے اس پر نظر رکھا کرو۔۔۔۔۔
مطلب۔۔۔۔۔۔؟؟؟وہ ٹھٹھکی
مطلب۔۔۔۔وہ دیکھو سامنے
دیا نے کپ سے گھونٹ بھرتے ہوئے سامنے
دیکھا
جہاں عبید کی کلاس کی ایکسٹرا ماڈ گرل "الیزا ابرار " آگے کو جھکی عبید کو کچھ کہہ رہی تھی اور عبید ہونٹوں پر دانت جمائے مسکراہٹ روک رہا تھا۔۔۔
اونہہ۔۔۔لوفر۔۔۔۔لفنگی۔۔۔۔ہے ہی کمینی۔۔۔دیا نے دانت رگڑے
ناصرف کمینی بلکہ بےشرم بھی پوری ہے۔۔۔دیکھو کتنا ڈیپ گلا ہے اور جھکی کھڑی ہے چڑیل۔۔۔۔۔فزا نے بھی غصے سے کہا
اسی لیے تمہیں کہتے ہیں نظر رکھو عبید
پر ۔۔۔۔۔سمن نے کہا
اب کیا اسکی آنکھوں کے سامنے شٹر ڈلوا دوں۔۔۔
بلکل۔۔۔۔عبید کے دل اور دماغ پر اپنی محبت کا شٹرڈاؤن کر کے بڑا سا تالا لگا دو۔۔۔۔سمن نے پتے کی بات کی
کہیں نہیں جانے والا۔۔۔۔کچھ بھی ایسا ویسا کر کے اپنے لیے مشکلات کھڑی نہیں کرے گا۔۔۔۔دیا مطمعین رہی
اتنا بھی ہلکا نہ لو دیا۔۔۔مرد ذات کا کوئی بھروسہ نہیں کب۔۔۔۔۔کہاں۔۔۔۔بدل جائے کچھ پتا نہیں
اچھا بس بڑی بی لیکچر بند کرو۔۔۔۔۔سارا مزا کرکرا کر دیا سموسوں کا۔۔۔۔(بظاہر نہ سہی پر اندر سے دیا کو بھی سمن کی بات ٹھیک لگی تھی)
دو سموسے کھا چکی ہو اور کتنے کھانے تھے تم نے۔۔۔۔۔؟؟؟
صرف دو۔۔۔۔میں نے چار کھانے کا ارادہ کیا تھا
ارے ارے۔۔۔۔اس موٹی کو دیکھو ذرا میری پلیٹ بھی چٹم کر گئی۔۔۔۔۔سمن نے دہائی دی
تمہیں کس نے کہا تھا لیکچر دو۔۔۔۔۔۔اریبہ ہنسی
اللہ۔۔۔۔۔۔موٹی نہیں چھوڑوں گی تجھے۔۔۔۔۔سمن فزا کی گردن دبوچ چکی تھی
چھوڑ۔۔۔۔چھوڑ۔۔۔۔میری گردن سوکھی سڑی بھنڈی ابھی بتاتی ہوں تجھے۔۔۔۔۔فزا گھٹی گھٹی آواز میں چیخی
سمن اور فزا کو بچوں کیطرح لڑتے دیکھ کر دیا اور اریبہ مسکرا دیں
…………………………….……….….………........
بڑی ہواؤں میں اڑ رہے ہو۔۔۔۔خیریت۔۔۔۔؟؟؟دیا نے عبید کو ٹیرس پر ٹہلتے دیکھ کر پیلر سے ٹیک لگا کر پوچھا
کون سی ہوائیں۔۔۔۔۔؟؟؟
وہی جو آجکل تمہارے اردگرد بڑی شدت سے چل رہی ہیں
سیدھے سے بات کیا کرو ورنہ منہ بند رکھا کرو اپنا۔۔۔
ہاں میری سیدھی باتیں تمہاری سمجھ میں نہیں آتی ہیں اور وہ جو۔۔۔۔۔عبید کے سیل کی ٹون نے دیا کی بات کاٹی
ہاں۔۔۔۔ہاں۔۔۔۔۔اوکے۔۔۔۔۔ایم کمنگ۔۔۔۔یاہ کمنگ۔۔۔ڈونٹ وری۔۔۔۔عبید سیل بند کرتا سیڑھیوں کیطرف بڑھا
کہاں جا رہے۔۔۔۔۔پہلے میری بات۔۔۔۔۔
تمہاری بات یقینا تمہاری طرح ہی فضول ہو گی۔۔۔اسلئیے پھر کبھی بھی ہو سکتی ہے۔۔۔۔بائے
عبید ہاتھ ہلاتا سیڑھیوں سے غائب ہو گیا مگر دیا ٹھان چکی تھی کہ وہ بات کر کہ رہے گی۔۔۔۔۔آخر چکر کیا ہے۔۔۔؟؟؟
…….…………………….….……...……………………
تمہاری جیکٹ کہاں ہے عبید جو صبح پہن کر آئے تھے۔۔۔۔۔دیا نے گروائنڈ میں اکیلے بیٹھے عبید سے پوچھا
کیوں۔۔۔۔عبید نے بھویں اچکائی
مجھے سردی لگ رہی ہے۔۔۔۔پلیز دے دو کہاں ہے گھر جا کر واپس کر دوں گی
ایسا بھی کیا فیشن کہ انسان سردی سے ٹھٹھر کر ہی مر جائے۔۔۔
تم نے کون سا پہن رکھی ہے۔۔۔۔اور مجھے اشد ضرورت ہے ورنہ میں دیا انصاری تمہاری چیپ سی جیکٹ پہنوں گی۔۔۔۔اونہہ۔۔۔۔۔وہ استہزائیہ ہنسی
اگر میری جیکٹ چیپ ہے تو مانگنے کیوں آئی ہو۔۔۔۔
ضرورت کے وقت گدھے کو بھی باپ بنا لیا جاتا ہے عبید صاحب۔۔۔تم تو پھر انسان ہو
بدتمیزی تم پر ختم ہوتی ہے۔۔۔۔دیا۔۔۔۔۔
تھینکس۔۔۔۔۔اب مہربانی کر کے جیکٹ دے دو میرا مزید مینتوں کا ارادہ نہیں۔۔۔
نہیں ہے میرے پاس۔۔۔۔وہ لاپرواہی سے بولا
کہاں گئی۔۔۔۔صبح پہنی تھی تم نے۔۔۔وہ حیران ہوئی
اوہ ہ۔۔۔۔۔۔عبید تم یہاں ہو میں پوری لائبریری کا چکر لگا کر آئی ہوں۔۔۔۔یہ لو جیکٹ اینڈ تھینکس آ لوٹ۔۔۔۔ڈرائیور سے منگوالی ہے میں نے جرسی۔۔۔۔الیزا نے دیا کو مکمل اگنور کرتے ہوئے عبید سے مسکرا کر کہا
ہونں۔۔۔۔عبید نےبھی جوابا مسکرا کر جیکٹ پکڑ لی
تم یہاں بیٹھے ہو۔۔۔۔سر رضوی کا لیکچر نہیں لینا کیا۔۔۔۔۔؟؟؟
ہاں تم چلو۔۔۔۔۔میں آتا ہوں ابھی
اوکے۔۔۔۔۔الیزا اک ادا سے مسکرا کر چلی گئی
عبید نے جیکٹ حیران کھڑی دیا کیجانب بڑھائی
مجھے نہیں چاہیے یہ بھیک۔۔۔۔۔ان بھیک منگیوں کو ہی دو۔۔۔۔۔میں اترن نہیں پہنتی سمجھے۔۔۔۔وہ غصے سے کہتی مڑی
لسن دیا۔۔۔۔۔سردی بہت ہے پہن لو۔۔۔۔ہر بات میں ضد اچھی نہیں ہوتی۔۔۔۔عبید نے اسکے ساتھ چلتے ہوئے کہا
وہ خاموشی سے چلتی گئی۔۔۔۔۔
دیا۔۔۔۔۔وہ سامنے آیا
کیا بدتمیزی ہے۔۔۔۔ہٹو سامنے سے
پہن لو۔۔۔۔۔وہ فکرمند ہوا
میری فکر مت کرو۔۔۔۔خدمت خلق کا فریضہ ادا کرو کافی ہے۔۔۔۔۔وہ آنسو روکتی جلدی سے راہداری مڑ گئی
عبید فکرمندی سے اسے دیکھتا رہ گیا
………………………………….….……………………
عبید لاؤنج میں بیٹھا چینل سرچنگ میں بزی تھا جب ملازمہ نے داجی کے بلاوے کا پیغام دیا
اوکے آتا ہوں۔۔۔۔وہ ریموٹ رکھتا داجی کے کمرے کی طرف بڑھا
آ جاؤں داجی۔۔۔۔۔اجازت مانگی
ہاں آؤ۔۔۔۔۔۔انہوں نے سر ہلا کر اجازت دی
آپ نے بلایا۔۔۔۔؟؟؟
ہونں بیٹھو۔۔۔۔
عبید ایک سرسری نظر ہیٹر کے پاس بیٹھ کر مونگ پھلی کھاتی دیا پر ڈال کر بیٹھ گیا
جی۔۔۔۔؟؟
یہ الیزا کون ہے۔۔۔۔۔؟؟؟داجی نے اسے دیکھتے ہوئے پوچھا
عبید نے پھر ایک نظر دیا کو دیکھا جو ایسے مصروف تھی جیسے وہاں اکیلی ہو
میری کلاس فیلو۔۔۔۔۔وہ مدھم سا بولا
ہونں۔۔۔۔صرف کلاس فیلو۔۔۔۔یقین چاہا گیا
جی۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اسی میں بہتری ہے اسکی بھی اور تمہاری بھی کہ تم دونوں کلاس فیلوز ہی
رہو ۔۔۔۔۔اب تم جاؤ
مگر داجی۔۔۔۔۔بات کیا ہے جو آپ پوچھ رہے ہیں۔۔۔۔۔۔یقینا دیا نے ہی کوئی الٹی سیدھی بات کی۔۔۔۔۔۔۔۔
داجی نے ہاتھ اٹھا کر اس کی بات کاٹی
تم جاؤ عبید۔۔۔۔۔۔۔دیا نے کچھ الٹا سیدھا نہیں کہا
فائن۔۔۔۔۔عبید وہاں سے تو اٹھ آیا مگر رات کو دیا پر غصہ نکالنے سے باز نہیں آیا
کیا بکواس کی تھی تم نے داجی سے۔۔۔۔وہ اسکے بیڈ کے پاس آ کر چلایا
دیا کتاب کھول کر کمبل میں دبکی بیٹھی تھی
وہی جو سچ ہے۔۔۔۔وہ آرام سے بولی
کیا سچ ہے۔۔۔۔؟؟
تمہارا اور الیزا کا چکر۔۔۔۔۔۔۔اطمینعان سے کہا گیا
کیسا چکر۔۔۔۔؟؟؟؟
اتنے بھولے مت بنو سرتاج۔۔۔
شٹ اپ۔۔۔۔۔
یو شٹ اپ۔۔۔۔ایک تو چوری اوپر سے سینہ زوری۔۔۔
کیسی چوری۔۔۔۔۔؟؟کہاں کی چوری۔۔۔؟؟ تم انتہائی چیپ مینٹیلٹی کی مالک ہو دیا
اور تم کچھ ایکسٹڑا براڈ مائنڈڈ ہوتے جارہے ہو عبید۔۔۔۔وہ بھی دوبدو چلائی
کیا کیا ہے میں نے۔۔۔۔؟؟؟عبید نے اس کا بازو پکڑ کر اسے کمبل سے باہر گھسیٹا
تم۔۔تم۔۔۔۔چھوڑو مجھے بدتمیز انسان۔۔۔وہ اسکی حرکت پر ششدر تھی
عبید کا اتنا سیریس ری ایکشن پہلی دفعہ دیکھا تھا
پہلے بتاؤ کونسا چکر اور کیسی چوری۔۔۔؟؟؟
تمہارے اور اس چڑیل کے بیچ کیا چل رہا ہے۔۔۔۔؟؟؟
اوہ۔۔۔۔تم جیلس ہو رہی ہو الیزا سے۔۔۔؟؟؟وہ استہزائیہ ہنسا
جیلس۔۔۔۔جیلس ہوتی ہے میری جوتی اس پھاپھے کٹنی سے۔۔۔۔۔لیکن اگر تمہارا یا اس کا کوئی چکر نکلا تو میں تمہیں زندہ نہیں چھوڑوں گی سمجھے۔۔۔۔۔
تمہارے ساتھ زندہ رہ کر کروں گا بھی کیا اس لیے یہ شوق بھی پورا کر لینا سمجھی۔۔۔۔۔عبید بھی اسی کے انداز میں کہہ کر اسکا بازو جھٹکتا کمرے سے نکل گیا
جنگلی۔۔۔۔وحشی۔۔۔۔دیا اپنا بازو سہلانے لگی
کچھ تو ہے بیچ جو مڑوڑ اٹھ رہے ہیں نواب کو۔۔۔۔نہیں چھوڑوں گی میں تمہیں عبید انصاری اور نہ ہی تمہاری اس ہوتی سوتی کو ۔۔۔دیکھ لینا۔۔۔۔میرا نام بھی دیا زیاد انصاری ہے
دیا نے منہ پر ہاتھ پھیر کر کھوج لگانے کی نیت کی
………….…………………...….….…

Continued........


  10/05/20   2قسط نمبر


0/Post a Comment/Comments

Please Do Not Enter Any Spam Link In THe Comment box.

Previous Post Next Post